زمبابوے کی حکمراں جماعت نے رابرٹ موگابے کو عہدہ صدارت سے باقاعدہ معزول کر دیا

ہرارے:زمبابوے میں فوجی بغاوت کے بعد حکمران جماعت نے رابرٹ موگابے کو عہدہ صدارت سے مستعفی ہونے کے لیے زبردست دباؤ ڈالتے ہوئے انہیں صدر کے عہدے سے ہٹا کرسابق نائب صدر ایمرسن کو ذمہ داریاں سونپ دیں۔حکمران پارٹی زیڈ اے این یو-
پی ایف نے اپنے خصوصی اجلاس میں93سالہ صدر رابرٹ موگابے کوپیر تک کی مہلت دی تھی کہ وہ صدر کے عہدے سے خود مستعفی ہوجائیںیا پھرمواخذہ کے لیے تیار رہیں۔ کیونکہ عوامی اور سیاسی حلقوں کی جانب سے دباو بڑھ رہا ہے کہ رابرٹ موگابے کا مواخذہ کیا جائے۔
اس کے ساتھ ہی پارٹی کی اس خصوصی میٹنگ میں اتفاق رائے سے مسٹر موگابے کو ان کے عہدے سے برطرف بھی کردیا گیا۔گزشتہ 37 برسوں سے زمبابوے کے اقتدار پر قابض مسٹر موگابے کو پارٹی سے باہر کا راستہ دکھانے والی مہم کی قیادت کرنے والے کرس متسوانگوا نے کہا کہ اس اجلاس میں نائب صدر ایمرسن منگاگوا کو دوبارہ بحال کر دیا گیا ہے اور مسٹر موگابے کی اہلیہ محترمہ گریسکو پارٹی کی خواتین لیگ کے سربراہ کے عہدے سے بھی ہٹا دیا گیا ہے۔
مسٹر متسواگوا نے میٹنگ کی قیادت کرتے ہوئے کہا کہ مسٹر موگابے کو فوری طور پر استعفیٰ دے کر ملک چھوڑ کر چلے جانا چاہیے ۔حکمران جماعت نے رابرٹ موگابے کے ساتھ ساتھ ان کی اہلیہ گریس موگابے کی بھی پارٹی کی رکنیت ختم کر دی ۔ موگابے کو صدراتی عہدے سے ہٹانے کی خبر شائع ہونے کے بعد زمبابوے میں جشن کا سماں ہے۔ زمبابوے کی عوام نے فوجی بغاوت کا خیر مقدم کیا تھا اور ہزاروں لوگوں نے سڑکوں پر نکل کر موگابے کے خلاف خوشی میں نعرے لگائے۔
زمبابوے میں فوجی بغاوت کے بعد 37 سال سے حکومت میں رہنے والے صدر رابرٹ موگابے کو ان کی رہائش گاہ پر نظر بند کر دیا گیا تھا۔ رابرٹ موگابے کے صدر نہ رہنے کے بعد اِن کے خلاف ریفرنسز لانے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Zimbabwes ruling party sacks robert mugabe as leader in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News
What do you think? Write Your Comment