زمبابوے میں فوجی انقلاب،رابرٹ موگابے کا37سالہ دور اقتدار ختم؟

ہرارے: زمبابوے میں فوجی انقلاب کے بعد فوج نے ملک کا نظم و نسق مکمل طور پر اپنے قبضہ میں لینے کے بعداعلان کیاکہ معزول صدر رابرٹ موگابے ، جو گذشتہ37سال سے بر سراقتدار تھے،بخیر و عافیت ہیں۔
سرکاری ریڈیو، ٹی وی پر قبضہ کرنے کے بعد ایک فوجی ترجمان نے اعلان کیا کہ فوج صرف ان لوگوں کے خلاف کارروائی کر رہی ہے جو مسٹرموگابے کے قریبی تھے اور ملک کی اقتصادی و سماجی بحران کا باعث بنے ہیں۔ دارالحکومت ہرارے میں سڑکوں پر فوجی گاڑیاں اور ٹینک گشت کر رہے ہیں۔
فوج نے حکومتی ابلاغی ذرائع کے ساتھ ساتھ ہوائی اڈے اور تمام اہم عمارتوں پر قبضہ کر لیا ہے۔ موگابے حکومت کی جانب سے کسی قسم کی مزاحمت نہیں کی گئی۔ امریکہ اور بعض دیگر ممالک نے اپنے سفارت خانے بند کر دیے ہیں۔
واضح رہے کہ مسٹر موگابے نے گزشتہ روز اپنی بیوی گریس موگابے کے حق میں جنرل چیونگا کو نائب صدر کے عہدے سے برخاست کر تے ہوئے فوج پر بغاوت آمیز رویے کا الزام لگایا تھا۔
جس پر جنرل چیونگا نے کہا تھا کہ فوج ملک میں غیر آئینی برطرفیوں کو روکنے کے لیے تیار ہے۔ زمبابوے میں گزشتہ 37 سالوں سے رابرٹ موگابے حکومت کر رہے تھے۔
فوج اور رابرٹ موگابے کے درمیان سیاست میں مداخلت کے موضوع پر اختلاف پایا جاتا تھا ۔جو بدھ کے روز ہرارے میں گولیوں کی تڑ تڑاہٹ اور توپوں کی گھن گرج پر منطبق ہوا۔

Title: zimbabwe crisis army takes over says mugabe is safe | In Category: دنیا  ( world )

Leave a Reply