الیکشن ہیکینگ معاملہ پر امریکہ نے روس کے خلاف پابندیوں کا اعلان کر دیا

واشنگٹن:صدر براک اوبامہ کے رخصت پذیر ایڈمنسٹریشن نے 2016کے امریکی صدارتی انتخابات میں روس کی مبینہ سائیبر مداخلت اور ہیکنگ کے خلاف غیر معمولی اقدامات کیے ہیں جن پر روس چراغپا ہو گیا اور اس کے حکام نے کہا ہے کہ وہ بھی جیسے کو تیسا کے تحت جواب دیں گے۔وائٹ ہاؤس سے جاری بیان کے مطابق حکومت نے صدارتی انتخابات میں مبینہ مداخلت پر 9اداروں اور اہلکاروں پر پابندی عائد کر دی ہے۔جن میں دو روسی خفیہ ایجنسیاں جی آر یو اور ایف ایس بی ، جی آر یو کے چار افسران اور جی آر یو کی کارروائیوں میں مادی تعاون دینے والی تین کمپنیاں شامل ہیں۔علاوہ ازیں اوبامہ ایڈمنسٹریشن نے 35 روسی حکام کو ملک چھوڑنے کا حکم دیا۔ امریکی وزارت خارجہ نے واشنگٹن میں واقع روسی سفارت خانے اور سان فرانسسکو میں واقع قونصل خانے سے 35 سفارت کاروں کو نکال دیا ہے۔
انہیں 72 گھنٹے کے اندر اندر خاندان سمیت امریکہ چھوڑنے کے لئے کہا گیا ہے۔ ان سفارت کاروں کو اپنے سفارتی حیثیت کے منفی طریقے سے کام کرنے باعث ناقابل قبول قرار دیا گیا ہے۔ ہوائی میں چھٹیاں منا نے والے مسٹر اوباما نے ایک بیان میں کہا”ہم نے روس کی حکومت کو کئی نجی اور سرکاری انتباہ بھیجنے کے بعد یہ قدم اٹھایا ہے۔ یہ بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی کرکے امریکہ کے مفادات کو نقصان پہنچانے کی کوشش کرنے والوں کے خلاف ضروری اور مناسب کارروائی ہے“۔ مسٹر اوباما نے کہا ”تمام امریکیوں کو روس کی کارروائی سے ہوشیار ہو جانا چاہئے“۔ واضح رہے کہ امریکی انتظامیہ کے اس اقدام سے امریکہ کے میری لینڈ اور نیو یارک میں واقع دو روس? سرکاری احاطے تک اب وہاں کے لوگوں کی رسائی نہیں ہوگی۔ سائبر حملے کے معاملے میں اوباما انتظامیہ نے یہ اب تک کا سب سے سخت قدم اٹھایا ہے۔
روسی صدر دفتر کریملن نے امریکی کارروائی کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے مناسب جوابی کارروائی کا وعدہ کیا۔ اس نے یہ سوال بھی کیا کہ کیا نو منتخب صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے بھی ان پابندیوں پر مہر لگائی ہے۔ امریکی انٹیلی جنس ایجنسیاں اس نتیجے پر پہنچی ہیں کہ ڈیموکریٹک پارٹی اور اس کی شاخوں میں ہیکنگ کے پیچھے روس کا ہاتھ تھا۔ انہوں نے کہا کہ روس? سائبر حملہ آوروں کا مقصد ریپبلکن پارٹی کے امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ کی جیت کو یقینی بنانا تھا۔
مسٹر ٹرمپ نے ایجنسیوں کے اس تفتیش کو مسترد کر دیا ہے۔ واضح رہے کہ اب تک یہ واضح نہیں ہے کہ روس کے صدر ولادیمیر پوٹن سمیت اعلی قیادت کے پرستار مسٹر ٹرمپ 20 جنوری کو امریکی صدر کا عہدہ سنبھالنے کے بعد ان پابندیوں کو جاری رکھتے ہیں یا واپس لے لیتے ہیں۔اوباما انتظامیہ صدارتی انتخابات کے دوران سیاسی جماعتوں اور رہنماؤں کے سرورز اور ای میلز کی سائبر ہیکنگ کی تحقیقات کا اعلان کر چکے ہیں۔ یہ رپورٹ جنوری کے آغاز میں آ سکتی ہے۔ دوسری طرف امریکہ کے نو منتخب صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے کہا کہ انتظامیہ کو ’اپنی طرف سے پوری کوشش کرنی چاہئے اور ہر معاملہ کی تہہ تک جانا چاہئے“۔ اب تک مسٹر ٹرمپ نے سائبر حملوں میں روسی کردار کو ماننے سے انکار کیا ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: White house announces retaliation against russia sanctions ejecting diplomats in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply