ترکی کو مزید 6لاکھ شامی تارکین وطن کی آمد کا ڈر

انقرہ: ترکی کے نائب وزیر اعظم نعمان کورتولموش نے کہا ہے کہ ترک حکومتکو خدشہ ہے کہ شام کے صوبہ الیپو میں خونریز جنگ کے پیش نظر اس کی سرحد پرمزید6لاکھ تارکین وطن پہنچ سکتے ہیںجس سے بد ترین صورت حال پیدا ہو جائے گی۔ کورتولموش نے کابینہ اجلاس کے بعد میڈیاکے نمائدوں سے بات کرتے ہوئے کہاکہاس خطہ میںجو سب سے خوفناک منظر منھ پھاڑے کھڑا ہے وہ ترک سرحد پر نئے 6لاکھ شامی تارکین وطن کی آمد کا ہے جو عنقریب ترکی کی سرحد پر جمع ہو سکتے ہیں۔الیپو صوبہ کے شمال میں روسی فضائی کمک سے گذشتہ ایک ہفتہ سے جس طرح سرکاری فوج اور باغیوں میں خونریز جھڑپیں ہو رہی ہیں اس سے لاکھوں شامی باشندے بے گھر ہو گئے ہیں۔ کورتولموش نے کہا کہ اس صورت حال کے نتیجہ میں ہم دیکھ رہے ہیں کہ دو لاکھ افراد کو نقل مکانی پر مجبور ہونا پڑ رہا ہے ۔جن میں سے65ہزار نے ترکی کا قصدکیا ہے جبکہ ایک لاکھ پینتیس ہزار ابھی شام کے اندر ہی ہیں۔ اس سے قبل8فروری کو وزیر اعظم احمد داو¿د اوغلوکہہ چکے ہیں کہ کم و بیش 30ہزار شامی پہلے ہی ترک سرحد پر جمع ہو چکے ہیں۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Turkey fears new influx of up to 600000 syrian migrants deputy pm in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply