ہندوستان و افغانستان نے امریکہ کی نئی افغان پالیسی کی حمایت کی

نئی دہلی/کابل: افغانستان کے حوالے سے ڈونالڈ ٹرمپ کی وضع کردہ نئی امریکی پالیسی کی ہندوستان اور افغانستان دونوں نے ہی خیر مقدم کیا لیکن پاکستان کو اس سے زبردست بوکھلاہٹ ہو گئی ہے ۔ ہندوستان میں نریندر مودی حکومت نے امریکہ کی نئی پالیسی کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان افغان عوام کے ساتھ اپنی دوستی نبھاتے ہوئے تعمیر و ترقی میں معاونت جاری رکھے گا نیز وہ پر امن، خوشحال اور مستحکم افغانستان کے لیے پر عزم ہے۔ ہندوستانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ ان کا ملک سرحد پار دہشت گردوں کی پناہ گاہوں کو ختم کرنے اور مختلف چیلنجز کا مقابلہ کرنے کے لیے امریکی اقدامات کا خیر مقدم کرتا ہے۔
دوسری جانب افغانستان میں اشرف غنی سرکار نے امریکہ کی نئی افغان پالیسی کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ امریکی افواج کی ملک میں موجودگی اور اضافے کا فیصلہ خوش آ ئند ہے۔ صدارتی دفتر سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ دہشت گردی کے خاتمے کے لیے افغانستان اور امریکہ کی شراکت داری مضبوط ہو رہی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ہماری افواج اپنی طاقت سے طالبان سمیت دیگر سیاسی دہشت گردوں کو یہ باور کروائیں گی کہ وہ کبھی بھی ہم پر فوجی برتری حاصل نہیں کرسکتے ہیں۔
یاد رہے کہ صدر ٹرمپ نے پاکستان ، افغانستان اور ہندوستان سے متعلقمیں اپنی نئی پالیسی میں کہا ہے کہ پاکستان اور افغانستان کے معاملے میں امریکہ کے اہداف بالکل واضح ہیں۔ صدر ٹرمپ نے کہا تھا کہ پاکستان کو چاہیے کہ وہ اپنی سرزمیں سے دہشت گردوں کی پناہ گاہیں ختم کرے۔کیونکہ ہم اسے اربوں کھربوں ڈالر کی شکل میں قرضہ و امداد دیتے ہیں۔ لیکن وہ پھر بھی ان دہشت گردوں کو پال اور ان کی کفالت کر رہا ہے جو امریکہ کے کھلے دشمن ہیں۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Trumps afghan shift praised in kabul and new delhi but leaves pakistan wary in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply