گرفتار سعودی شہزادے الولید بن طلال کے مجموعی اثاثہ جات کی مالیت19کھرب ڈالر

ریاض:سعودی حکومت کی تشکیل کردہ کمیٹی برائے انسداد بد عنوانی کے ہاتھوںگرفتار ہونے والے کھرب پتی شہزادے الولید بن طلال کی سٹی گروپ، یورو ڈزنی، ایپل، ٹوئیٹر، 21صدر فوکس اور لیفٹ سمیت کئی بین الاقوامی کمپنیوں میں خفیہ سرمایہ کاری کی تفصیلات منظر عام پر آگئیں۔بلوم برگ کی رپورٹ کے مطابق کرپشن کے الزام میں گرفتار ہونے والے سعودی شہزادے کا شمار دنیا کی ابتدائی 50 امیر ترین شخصیات میں ہوتا ہے ان کے کل اثاثہ جات کی مالیت 19 کھرب ڈالر ہے۔
بلوم برگ کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والے اثاثوں کی تفصیل میں الولید کی مختلف کمپنیوں کی لین دن اور سرمایہ کاری کے ساتھ بینفشری تفصیلات بھی موجود ہیں۔بلوم برگ کے رپورٹ کے مطابق شہزادے نے نامور کمپنیز جیسے ایپل، سٹی گروپ وغیرہ میں سرمایہ کاری کر رکھی ہے۔ان کے اثاثہ جات کی مالیت کا اندازہ اس طرح بھی لگایا جا سکتا ہے کہ وہ 2007 میں اپنا ذاتی طیارہ اے 380 خریدنے اور پرائیوٹ ہوائی اڈہ بنانے کا ارادہ رکھتے تھے۔لولید بن طلال کی کمپنی کے ترجمان نے ایک اعلامیہ جاری کیا جس میں انہوں نے بتایا کہ شہزادے کے اثاثہ جات کی تفصیلات پہلے ہی حکومت کے پاس موجود ہیں۔
انہوں نے بینکوں اور دیگر نجی کمپنیز میں سرمایہ کاری کر رکھی ہے جو حکومت کو سالانہ ٹیکس باقاعدگی سے ادا کرتی ہیں۔رپورٹ کے مطابق شیخ الولید بن طلال نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر 2011 میں 300 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کی تاہم ان کے ٹوئٹر میں موجودہ حصص 4.9 فیصد ہیں۔ رپورٹ کے مطابق سعودی شہزادے کے پاس موبائل فون کی معروف کمپنی ایپل کے 6 ارب 23 کروڑ حصص موجود ہیں۔ انہوں نے 1997 میں 11 کروڑ 54 لاکھ ڈالر کی سرمایہ کاری کی تھی۔بعد ازاں انہوں نے لیفٹ نامی کمپنی میں سرمایہ کاری کی اور 247 ارب 7 کروڑ ڈالر کے حصص خریدے جس میں سے کچھ حصہ فروخت کیا جا چکا ہے۔ ٹیکس گوشواروں کے مطابق شیخ الولید نے میڈیا انڈسٹری میں بھی سرمایہ کاری کی انہوں نے 2015 میں روپرٹ مرچڈوچ سے 3 کروڑ 97 لاکھ ڈالر کے حصص خریدے ۔

Title: total assets of prince alwaleed is 19 trillion | In Category: دنیا  ( world )

Leave a Reply