عالم اسلام بحران کا شکار

سبھاش چوپڑا
ایسا محسوس ہوتا ہے کہ عالم اسلام اس وقت جس بحران کے دور سے گذر رہا ہے اس سے قبل کبھی ایسی صورت حال سے دوچار نہیں رہا اور شاید صلیبی جنگ کے بعد ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ اس کا وجود اتنے زبردست بحران سے دوچار ہوا ہے۔اس کا اظہار لندن سے شائع ہونے والے ایک ماہانہ انگریزی جریدے ایشین افئیرز میں کالم نویس حسن سرور نے کیا ہے ۔ان کا کہنا ہے کہ کنبہ کے اندر ہی خانہ جنگی فرقہ بندی کر رہی ہے۔ کشمکش مسلمانوں اور کفار کے درمیان تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ متقی مسلمانوں اور بدعتی مسلمانوں اور یہاں تک کہ سنی و شیعہ مسلک کے مسلمانوں میں بھی لڑائی ہو رہی ہے۔
اب یہ کم ہو کر سنی بمقابلہ سنی، شیعہ بمقابلہ شیعہ ہوتے ہوئے اس حد تک چلی گئی ہے جہاں ایک مسلمان دوسرے مسلمان کے خلاف صف آرا ہے۔ اب ہم دیوبندیوں، بریلویوں، سلفیوں، وہابی سلفیوں کے خانوں میں بٹ گئے ہیں اور خود ساختہ داعیان اسلام کے ذریعہ جنتی یا جہنمی مسلمان قرار دیے جانے لگے ہیں۔اور اگر آپ ان کے قول و فعل کے عین مطابق عمل نہ کریں تو پھر ان ملاؤں کے عتاب سے خدا ہی محفوظ رکھ سکتا ہے۔جذبہ صبر و تحمل کے عنقا ہوجانے سے نہایت مایوسی کا اظہا رکرتے ہوئے حسن سرور رقمطراز ہے کہ اسلام کی داخلی جنگ ختم ہونے کے بجائے عالم اسلام میں سیاسی بالا دستی کے لیے سنی سعودیوں اور شیعہ ایرانیوں کے درمیان بڑھتی چپقلش کے باعث مزید سنگین رخ اختیار کر لے گی ۔اب تو یہ حال ہو گیا ہے کہ خود کو مسلمان کہتے ہوئے بھی ندامت ہوتی ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: The crisis facing global islam in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply