تائیوان چین سے کسی دباؤ کے بغیر تعلقات برقرار رکھنے کا خواہاں،ایک چین اصول منظور نہیں

تائی پے: تائیوان کی صدر سائی اینگ وین نے چین سے ان کے ملک کے تئیں نظریہ بدلنے کی اپیل کرتے ہوئے باہمی دوستانہ تعلقات کو فروغ دینے کو کہا۔ ایک نیوز لیٹر کو دیئے انٹرویومیں محترمہ سائی نے کہا کہ دونوں فریقوں کے بہتر تعلقات سے چین کو فائدہ ہو گا۔ چین کو اس پر غور کرنا چاہئے کہ کس طرح وہ ہمارے ساتھ دوستانہ تعلقات قائم رکھے۔ انہوں نے کہا کہ عالمی فضا بدل رہی ہے اور دو طرفہ تعلقات میں امن اور استحکام رکھنے کی ذمہ داری دونوں فریقوں کی ہے۔
آزادی کے حامی ڈیموکریٹک پروگریسو پارٹی کی قیادت کرنے والی محترمہ سائی نے کہا کہ وہ چین سے دباؤ کے بغیر پرامن تعلقات برقرار رکھنا چاہتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چین کے ساتھ ’حالات کو اسی طرح برقرار رکھنے‘ کے حق میں ہیں لیکن’ایک چین‘اصول کو قبول نہیں کریں گی۔ تائیوان پر دعوی کرنے والے چین نے محترمہ ساءکے صدر بننے کے بعد سرکاری طور پر رابطہ کے راستے بند کر دیے ہیں۔ ان سے جب اس سال کے آخر میں ایک کمیونسٹ پارٹی کی کانگریس کے بعد صدر شی جن پنگ کی بڑھنے والی طاقت کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ کسی بھی سیاسی فیصلے کے بعد تمام ممکنہ نتائج کے لئے تیار رہنا چاہئے۔

Title: taiwan president calls on china to extend goodwill newspaper | In Category: دنیا  ( world )
Tags: ,

Leave a Reply