ہوگیامانندِ آب ارزاں مسلمان کالہو

سمیع اللہ ملک ،لندن
دنیابھرمیں مسلمان رمضان المبارک کی جہاں برکتیں اوررحمتیں سمیٹنے میں مصروف ہیں وہاں شام میں بے گناہ مسلمانوں پرجوقیامت ڈھائی جارہی ہے،جس اذیت اورکرب میں وہ مبتلاہیں ،اس کاہمیں اندازہ تک نہیں۔ملک شام جہاں بیک وقت کئی جنگیں لڑی جارہی ہیں،تازہ المیے کاسبب روسی جنگی طیاروں کی اندھادھندبمباری بنی جواپنے اسٹرٹیجک اتحادی بشارالاسدکی حکومت کوانسانی خون سے تیار”حیات بخش “سیرپ پلانے کااہتمام کرتے رہتے ہیں۔ الجزیرہ ٹی وی کے مطابق پچھلے ہفتے اتوارکوشامی صدربشارالاسداورروسی فضائیہ نے شام کے ایک شہرحلب پرشدیدبمباری کے دوران کلسٹربم برساکرکے قیامت صغریٰ برپاکردی ہے جس کے نتیجے میں سینکڑوں افرادجس میں بوڑھے افراد،عورتوں اوربچوں کی کثیرتعدادشہیدہوگئی ہے۔شام میں پانچ برس قبل شروع ہونے والی خانہ جنگی کے بعدسے اب تک یہ سب سے شدیداورخوفناک بمباری تھی۔صبح سے ہی کی جانے والی بمباری کے دوران القطرگی،حلک، جمبلنگ،الحیدریہ اوربابس کونشانہ بنایاگیا۔شامی مبصرین برائے انسانی حقوق کے مطابق القطرگی نامی علاقے میںدرجنوں افرادکے پرخچے ارادیئے گئے ہیں جس کی وجہ سے شناخت میں بڑی مشکل پیش آرہی ہے اورفی الحال شہداءکی صحیح تعدادکابھی اندازہ نہیں لگایاجاسکتا۔الجزیرہ ٹی وی کے مطابق اتوارکوحلب پر75سے زائدفضائی حملے کئے گئے ،ان میں سے بیس حملے حلب کے ان راستوں پرکئے گئے جسے اپوزیشن گروہ رسدکی تسلسل برقراررکھنے کیلئے استعمال کرتے ہیں۔حلب کے شمال،جنوب،مشرق ومغرب کے علاوہ وسطی شہرمیں روسی اوربشارفضائیہ نے کلسٹربم بھی پھینکے ،اس دوران راکٹ اوربارودی بیرلزبھی داغے گئے، اسٹیریو کیمسٹری بارودی سرنگیں بھی پھینکی گئیں۔اس دوران کسی بھی طیارے سے محاذجنگ پرموجودافرادپرکوئی بمباری نہیں کی گئی۔
شہرحلب میں رمضان المبارک کے آغازسے ایک روزقبل ہی ایک بڑے انسانی المیے کاسبب روسی طیاروں کی وہ بمباری تھی جوانہوں نے رمضان المبارک سے پہلے اوررمضان کے پہلے ہی روزکی۔نشانہ حلب کے عام شہری علاقے تھے جن کابظاہرکسی جنگی ماحول میں گھرے یامتحارب گروہ کے علاقے سے کوئی علاقہ نہ تھا۔یقینا یہ خواتین اورکمسن بچے اپنے گھروں اورآنگنوں میں ہی اس روسی بمباری کاہدف بنے لیکن ان کی جانوں کابڑی تعدادمیں اتلاف کسی انسانی حقوق کے بڑے ادارے یابڑی اورچھوٹی طاقت کیلئے ان بنیادوں پرکوئی اہمیت نہیں رکھتاکہ یہ وہ بدقسمت اہل شام کے مسلمان تھے جن کی زندگی پچھلے کئی برسوں سے ان کے اپنے قصاب صفت بشارالاسدسمیت بہت سوں نے ارزاں کررکھی ہے۔ادھراحرارعلوی نے بشارالاسدکی اہلیہ کے ذاتی محافظ ہلاک کرنے کی ذمہ داری قبول کرلی ہے۔
بشارالاسددنیاکے ان چندحکمرانوں میں سے ہیں جواپنے اقتدارکے جائزوناجائزہونے کی بحث میں پڑنے والے نہیںبلکہ ان کاعقیدہ اقتدارکے ساتھ ہرقیمت پرچمٹ کررہنا ہے ۔ان کی ہوس اقتدارکی بھاری قیمت ان کے عوام پچھلی نصف دہائی سے اداکررہے ہیں ۔اپنے عوام کی جانوں اورخون کی بنیادپراپنے اقتدارکودوام بخشنے کیلئے روس ہی نہیں، ایران بھی ان کاہمنواہے۔ایرانی حمایت یافتہ لبنانی حزب اللہ بھی اس انسان کشی کی بین المملکتی خونی کھیل میں کئی برسوں سے بھرپوراندازمیں شریک ہے۔ایران جوآج کل یہی خدمات عراق میں بھی پیش کئے ہوئے ہے جہاںاس کے پاسداران انقلاب پرمشتمل فوجی دستے جنرل قائم سلیمانی کی زیرقیادت عملاًایران اورعراق میں سرحدی تفاوت کوختم کئے ہوئے ہے۔یہی معاملہ شام کے حوالے سے ایران کاہے۔ایران اپنے انقلاب کیلئے آس پاس کے ملکوں کی زمین ہموارکرنے اوراردگردنظریاتی پاکٹوں کووسعت وتقویت بخش رہاہے جواس کے نظریاتی توسیع پسندی کاخاصہ ہے۔
دوسری جانب روس بھی اپنے نظریاتی اتحادی حافظ الاسدکے بیٹے کی بھرپورسرپرستی سے مشرقِ وسطیٰ میں اپنی موجودگی اور مفادات کے حق میں ضروری سمجھتاہے۔ اس مقصدکیلئے بشارالاسد،ایران اورروس ایک ہی صفحے پرہیںجبکہ حزب اللہ مشرقِ وسطیٰ میں اپنالوہامنوانے اورمستقبل کے عزائم کیلئے ہی نہیںایران کے حمائت یافتہ ہونے کے ناطے اورشام میں ایک عملی ٹھکانے کیلئے اپنے جوانوں کی جانیںدے بھی رہی ہے اوراہل شام کی جانیں بھی لے رہی ہے۔خطے میں سعودی عرب کے مقابل اپنے مسلکی اختلاف کی بنیادپراپنے لیے جگہ بنانااورجہاں جہاں پہلے سے امکانات موجودہیںانہیں مزیداجاگرکرناایران اورلبنان کی شیعہ ملیشیا دونوں کیلئے اہم ترہے۔
ایک اورپہلواہل شام کی تباہی کاامریکااوراس کے اتحادیوں کی اپنے عالمی ایجنڈے کے حوالے سے ہے۔یہ امریکی اتحادی بشارالاسدکے ساتھ نظریاتی عدم قربت سے زیادہ اس خطے میں اپنے براہِ راست اوربالواسطہ مفادات کواہمیت دیتے ہیں۔اس لئے ان ممالک کے جنگی طیارے نہ صرف یہ کہ روسی طیاروں کی طرح بمباری کرتے ہیںبلکہ بشارمخالف بعض عسکری گروپوں کواسلحے سمیت مالی اورسیاسی حمایت دیتے ہیں۔اس ناطے سعودی عرب اوربعض دوسرے ملک بھی اس عالمی اتحادکاحصہ ہیں۔اگلاجوطبقہ اس جنگ میں اپنے آپ کواس میں شامل کیے ہوئے ہے وہ القاعدہ اورالنصرہ فرنٹ نامی مقامی گروپوں کے علاوہ داعش کے عسکریت پسندبھی ہیں،سعودی عرب اورپوری عرب لیگ بشارالاسدکے مخالف کیمپ میں کھڑی ہے۔اس ناطے وہ شامی آزادفوج کے ساتھ کھڑی ہے۔اسرائیل، اس سارے منظرنامے میںبراہِ راست بھی اوربالواسطہ طورپربھی سب سے زیادہ فائدہ میں ہے۔مشرق ِوسطیٰ میں عرب دنیاایک جانب باہم دست وگریبان ہے اوردوسری جانب ایران اورعرب دنیاکے درمیان اس معاملے پربھی ایک خلیج ہی نہیںبلکہ جنگی ماحول پایا جا تا ہے ۔اسرائیل ان میں سے کسی کودرپردہ مدددیتاہے یانہیں،یہ واضح نہیںکہ اس کافائدہ سب سے زیادہ جاری ہے کہ اس عرب تقسیم اوراگلے مرحلے پرعرب ایران اختلاف کی وجہ سے فلسطین کامعاملہ عملاً بیک برنرپرہے۔امریکااوراس کے یورپی اتحادیوں کی اکثریت بھی اسرائیل کوہونے والے فائدے پرخوش ہیںکہ اسرائیل کے حق میں کچھ کہے سنے بغیر ہی اسرائیلی مفادات کوتقویت مل رہی ہے۔
اس پس منظرمیں شام کاتاریخی اہمیت کاحامل شہرحلب سب سے زیادہ آتش وآہن کی زدمیں رہاہے۔روسی جنگی طیاروں کی تازہ وحشیانہ بمباری اسی شہرپرہوئی ہے۔۔اب تک کی اطلاعات ہیںکہ روسی جنگی طیاروں کولیکربشارالاسدکی وفادارفوج ایک اوراہم شہررقہ کی طرف حملے کیلئے کوچ کرچکی ہیں،گویاحلب کولہولہان کرنے کے بعداگلی منزل کوخون سے غسل دینے کی تیاری جاری ہے۔بہرحال حلب شہرکی اہمیت کی پیش نظربشار کی وفادارفوجیں بھی اسی شہرپرقابض رہنے کی کوشش کرتی ہیںاوراس کوشش کے نتیجے میںحلب شہراوراس کے ارد گر دجنگ جاری رہتی ہے۔شہرکے کچھ حصے پربشارالاسد کی حامی فوج کاقبضہ بھی ہے،کچھ حصے پرآزادشامی فوج کاکنٹرول ہے۔کچھ علاقوں پرالنصرہ فرنٹ اورداعش وغیرکاقبضہ ہے اوران کے قدم مضبوط ہیں۔ایک چھوٹے سے حصے پرکردباغیوں نے بھی قبضہ کررکھاہے لیکن کوئی گروپ یافوج یہ دعویٰ نہیں کرسکتی کہ اسے موجودہ پوزیشن سے پسپائی نہیں اختیار کرنی پڑی ہے،بس فرق یہ ہے کہ کبھی ایک آگے ہوتاہے تودوسراپیچھے اورکبھی دوسراآگے توپہلاعسکری گروپ پسپائی کی راہ پرہوتاہے۔بعض اوقات ایک گروہ کی پوزیشن کمزورکرنے کیلئے ایک گروہ دوسرے کی درپردہ یا خاموش مددلازمی سمجھتاہے۔
حلب پرتازہ روسی وحشیانہ بمباری میں بھی یہی پیٹرن نظرآتاہے کہ روس کے خونی حملے کی کسی جانب سے ایسی مذمت نہیں کی جاسکی جوآئندہ کیلئے روس کوایسی بمباری سے روکنے والی ہو۔ اس چشم پوشی کی ایک اہم وجہ یہ بھی ہے کہ اگرروس نے اس بارماہِ جون میں حلب پربمباری کی ہے تودوسرے گروپ بھی یہی کرتے رہیں گے اوراگلے دنوں میں بھی اس کھیل کوسبھی گروپ اورافواج اپنی اپنی ضرورت،مفاداورحکمت عملی کے تحت جاری رکھنے کے حق میں ہیں۔شام اوراس کے ہمسائے میں عراق کاڈسٹرب رہنااوربدامنی کاشکاررہنا عالمی اورخطے کی بعض طاقتوں کیلئے بھی مفیدہوسکتاہے،اس لئے کوئی ایک ملک رمضان المبارک کاتقدس پامال کرتے ہوئے حلب کونشانہ بنائے یاشہری آبادیوں کوٹارگٹ کرے ، سب کویہی مفیدمحسوس ہوتاہے،اس تناظرمیںیہ کہاجاسکتاہے کہ عالمی طاقتیں شام میں موت کے اس خونی کھیل کوطوالت دینے کوایک حکمت عملی کے طورپرجاری رکھے ہوئے ہیں ۔ شام کے بارے دیگرایشوزپرباہم اختلاف اورضدہوسکتی ہے لیکن اس امرپرایک طرح سے اتفاق رائے ہے کہ یہ جنگ طویل ترہوتی رہے تاکہ مشرقِ وسطیٰ کوکبھی ایک کان سے اورکبھی دوسرے کان کوپکڑناممکن رہے۔
مشرقِ وسطیٰ کی دولت کسی مثبت کام میں نہ لگ سکے اوریہ کہ مشرقِ وسطیٰ میں بدامنی رہے گی توعالمی طاقتوں عالمی کسادبازاری کے باوجوداسلحہ فروخت ہونے کاامکان رہ سکتاہے۔ نیزعالمی طاقتوں کی اسلحہ انڈسٹری چلتی رہے گی اورمشرقِ وسطیٰ کاتیل اوردولت باآسانی بڑی طاقتوں کی دست وبردمیں رہیں گے۔مشرقِ وسطیٰ جتناباہم الجھے گااسرائیل کیلئے اتنا ہی مفیدہوگا اورعالمی طاقتوں کااسرائیل کیلئے مزیدکچھ ایساکرنے کی ضرورت نہ رہے گی جسے دنیاکے بعض ملکوں میں بے اصولی پرمبنی اوردوہرے معیارکاحامل سمجھاجاتاہے لیکن تازہ ترین وجہ وہ بوکھلاہٹ بھی بنی ہے جس کابشارالاسداوراس کے سرپرستوں کوحلب میں باربارناکامی کاسامناہے۔باربارکی ناکامی نے بشارالاسداوراس کے سرپرستوں اور جنگی اتحادیوں اورحواریوں کوبوکھلاہٹ کاشکارکردیاہے۔اس لیے انہوں نے حلب میں اب کی بارکمسن بچوں اورخواتین کوبھی بڑی تعدادمیں بمباری کی زدمیں لاناضروری سمجھا، حلب جسے پچھلے برسوں سے جنگ نے گھیررکھاہے جس کے شہریوں کی بڑی تعدادیاتوشہرسے نقل مکانی کرچکی ہے یالقمہ اجل بن چکی ہے اورجوبچی ہے وہ جنگی جنون میں مبتلا ملکوں میں اور گروہوں کے نرغے میں ہے۔یہ شہرایک طرح سے محصور ہے،کبھی ایک اورکبھی دوسراجنگی جنون میں مبتلاگروہ حملہ آورہوتاہے۔
حلب میں برسوں مئی اورجون کے مہینے اسی طرح لوگ وحشیانہ بمباریوں کانوالہ بنتے رہے ہیں۔مئی اورجون میں حلب کاموسم عام طورپر معتدل ہوتاہے لیکن مئی اورجون پرموقوف نہیں ،جولائی ،اگست اوراکتوبرنومبرمیں بھی ایسے حملے ہوتے رہتے ہیں۔اب تازہ حملے کے باوجودبشارکی فوج اوراس کے سب سے بڑے عالمی سرپرست روس کواپنارخ تبدیل کرناپڑاہے گویاحلب میں ابھی بھی بشارکسی بڑے حربی مقابلے سے خوفزدہ ہے۔اس لیے اب رقہ ان کی بارودی بارش کامرکزہوسکتاہے لیکن یہ بھی ممکن ہویہ محض ایک جنگی چال ہو۔ بشار فوج روسی جنگی طیاروں کے جلومیں ایک مرتبہ پھرحلب کے لوگوںپرحملہ آورہونے کی تیاریوں میں مصروف ہے۔ایک اطلاع یہ ہے کہ امریکااوراس کے اتحادی اب حلب میں اپنے مخالفین یعنی القاعدہ اورداعش وغیرہ کانشانہ بنانے کی تیاری کررہے ہیں لیکن کیاضمانت ہے کہ امریکی صرف عسکریت پسندوں کوہی نشانہ بنائیں گے یاماضی کی طرح پھرعام شہریوں کاجانی نقصان زیادہ ہوگا۔
روسی جنگی طیاروں کارخ کدھرہوتاہے یاان کی منزل کہاں قرارپاتی ہے ،یہ طے ہے کہ عالمی اداروں کوماضی میں امریکایاکسی اورکی جھولی میں گرے رہ کراپناشام کے بارے کردار
نہیںنبھانا چاہئے بلکہ اس انسانی المیے کوبارباردہرائے جانے کوروکنے کیلئے اپناحصہ ڈالناہوگا۔اقوام متحدہ اوردوسرے فورمزکواب اپنی سنجیدگی بھی ظاہرکرنی ہوگی اورصلاحیت کا اظہار بھی کرناہوگا۔تبھی ممکن ہے حلب اوررقہ جیسے دوسرے اہل شام کی بدقسمتی کے دن کم ہوسکیں۔یہ کسی بھی صورت پسندیدہ نہیں ہوسکتاہے کہ عالمی ادارے بھی موجودہوںاور عالمی طاقتیں بھی شام کے بارے میں اپنی حکمت عملی کامیاب بنانے کیلئے سازشوں کے جال بنتے رہیں۔عالمی اداروں کوسمجھناہوگاکہ بڑی طاقتوں کومشرقِ وسطیٰ میں آگ بھڑکائے رکھنے کی چھوٹ دیناعالمی اداروں کے شایان شان ہرگزنہیں ہوسکتاوگرنہ انہیں یہ بات ذہن نشین کرناہوگی کہ پنی انہی پالیسیوں کی بناءپروہ ایسی منتقم نوجوان نسل تیارکررہے ہیں جو بالآخران کے اپنے گھروں کوبھی غیرمحفوظ کردے گی اورانہیں امان کی کوئی جگہ نہ مل سکے گی!
خونِ ناحق بہت پی چکی یہ زمین  اب کوئی دن میں یہ خون اگلنے والی ہے

رابطے کے لیے :bittertruth313@gmail.com

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Syria civil war 224 killed in first week of ramadan in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply