سعودی عرب میں حقوق نسواں کی آواز بلند کرنے والی خاتون کو پھر گرفتار کر لیا گیا

ریاض:سعودی عرب میں خواتین کے حقوق کے لیے آواز اٹھانے والی سوشل ورکر لجین الھذلول کو دوبارہ گرفتار کرلیا گیا ہے۔ لجین کو اس سے پہلے بھی خواتین کے ڈرائیونگ کے حقوق کے لیے آواز بلند کرنے پر 73 دن حراست میں رکھا گیا تھا۔ ابھی سعودی حکام کی طرف سے اس گرفتاری پر کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔انسانی حقوق کے ادارے ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق لجین کو دمام کے کنگ فہد ایئرپورٹ سے 4 جون کو گرفتار کیا گیا ہے۔ اسی ادارے کے مطابق لجین کو نہ تو فیملی سے ملنے دیا گیا ہے اور نہ ہی وکیل تک رسائی دی گئی ہے۔ان کو اس سے پہلے سال 2014 میں متحدہ عرب امارات سے سعودی عرب میں داخل ہوتے وقت ڈرائیونگ کرتے ہوئے گرفتار کیا گیا تھا۔
پوری دنیا میں واحد سعودی عرب ایسا ملک ہے جہاں خواتین پر ڈرائیونگ کرنے پر پابندی ہے۔میڈیا اطلاعات کے مطابق انہیں مزید تفتیش کے لیے ریاض لے جایا جائے گا۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل کی رکن سماح حدید نے سعودی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ انہیںفوری طور پر رہا کیا جائے اور یہ کوئی معقول کام نہیں ہے۔واضح رہے کہ سعودی عرب میں ڈرائیونگ لائسنس سرف مردوں کو جاری کئے جاتے ہیں۔ جبکہ خواتین کو ڈرائیونگ کرنے پر گرفتار یا بھاری جرمانہ لگایا جاتا ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Saudi arabia jails human rights activist who defied womens driving ban in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply