کناڈا کے وزیر اعظم کی معافی صوبہ انٹاریا کے سکھ فرقہ کے لیے ایک تاریخی لمحہ

مونٹریال: انٹاریا صوبہ کے سکھوں کا ایک جمع غفیر حکومت کناڈا کی اس معافی نامہ کو سننے کے لیے اوٹاوا پہنچا جس کی سکھ قوم طویل عرصہ سے منتظر تھی۔ونڈسر کی سکھ کلچرل سوسائٹی کے صدر ہرجندر سنگھ کنڈولا سکھوں کے اس جتھے کی قیادت کر رہے تھے۔
کناڈا نے یہ معافی 1914کے اس سانحہ کی مانگی جس میں کناڈا نے وینکوور کے کول ہاربر میں دو ماہ تک لنگر انداز رہنے والے جہاز میں موجود 376سکھ پناہ گزینوں کو نسلی تفریق برتتے ہوئے سرزمین کناڈا پر قدم رکھنے کی اجازت نہیں دی تھی اور اس جہاز کو دو ماہ کے جاں گسل انتظار کے بعد امرتسر سے کناڈا جانے والے سکھوں کو لے کرہندوستان واپس جانے پر مجبور ہونا پڑا تھا۔
کنڈولا اور لاتعداد سکھوں کے لیے پارلیمنٹ میں وزیر اعظم کناڈا کے ذریعہ سکھ قوم سے معافی کے الفاظ سننا ایک تاریخی اور یادگار لمحہ تھا۔کنڈولا نے کہا کہ یہ لمحہ فخریہ ہے کہ کناڈا نے انسانی عظمت و وقار کی اہمیت کو تسلیم کیا ۔
انہوں نے کہا کہ ہم کو ہمیشہ انصاف سے کام لینا چاہئے اور ناانصافی کے خلاف آواز بلند کرنا اور حسن سلوک کرنا چاہئے۔ واضح رہے کہ وزیر اعظم کناڈا جسٹن ٹروڈیو کے پارلیمنٹ کے ایوان نمائندگان میںباقاعدہ معافی مانگنے سے کوما گاٹا مارو باب اب بند ہو گیا۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Prime ministers apology meaningful to windsor sikh community in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply