فلسطینی رہنما یہودیوں کو فلسطین میں آباد کرنے کے پر انگلستان کے خلاف مقدمہ درج کرائیںگے

رملہ: (یو این آئی) فلسطینی رہنماؤں نے عرب لیگ کی حمایت سے برطانیہ کے خلاف 1917 میں بیلفور اعلامیہ کے ذریعے یہودیوں کو فلسطین میں آباد کرنے پر مقدمہ درج کرانے کی منصوبہ بنانا شروع کر دیا۔
ایک رپورٹ کے مطابق موریطانیہ میں عرب لیگ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے فلسطین کے وزیر خارجہ ریاض المالکی نے کہا کہ 1917کو گزرے ہوئے تقریبا ایک صدی گزر چکی ہے۔فلسطینی صدر محمود عباس کی جانب سے، جو اپنے بھائی کے انتقال کر جانے کے باعث اجلاس میں شرکت کرنے سے قاصر تھے، عرب لیگ میں تقریر کرتے ہوئے فلسطینی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ مذکورہ وعدے ایک ایسے فریق سے کیے گئے جو اس (زمین) کا مالک یا حقدار نہیں تھا۔
یورپ اور دیگر علاقوں سے لاکھوں یہودیوں کو ہمارے لوگوں کی زندگیاں داؤ پر لگا کر فلسطین میں لاکر بسایا گیا۔ واضح رہے کہ مالکی نے واضح نہیں کیا کہ وہ اپنی شکایت کس ادارے میں درج کرانے کے خواہاں ہیں۔دوسری جانب اسرائیل کے وزیر خارجہ کے چیف ڈورے گولڈ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے ایک ٹوئٹ میں مذکورہ تجویز کو ’اسرائیل کے وجود کو غیر قانونی بنانے کی ایک کوشش‘ قرار دیا۔
یہ یاد رہے کہ فلسطینیوں نے 2012 میں اقوام متحدہ میں مبصر کی حیثیت حاصل کی تھی جس کے چند برسوں بعد 2015 میں انھوں نے بین الاقوامی فوجداری عدالت سے رجوع کیا اور مطالبہ کیا کہ وہ 2014 میں اسرائیل کی جانب سے غزہ میں کی جانے والی بمباری کے حوالے سے جنگی جرائم کے تحت تحقیقات کرے۔
خیال رہے کہ برطانیہ کے سیکریٹری خارجہ آرتھر بیلفور کی جانب سے 2 نومبر 1917 کو جاری ہونے والے اعلامیے میں کہا گیا تھا کہ برطانوی حکومت ’یہودی لوگوں کے لیے فلسطین میں ایک ملک کے قیام کی حمایت کے حوالے سے دیکھ رہی ہے‘۔ اس اعلامیے کو 1948 میں قائم ہونے والے اسرائیل کیلئے ایک اہم اقدام تصور کیا جاتا ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Palestinian leaders will sue uk over balfour declaration in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply