ہم یہودیوں یا یہودیت کے نہیں صیہونی قبضہ و عزائم کے خلاف ہیں:حماس

یروشلم::فلسطینی تنظیم فلسطینی اسلامی مزاحمتی تحریک المعروف حماس اپنے 1988کے تاسیسی چارٹر میں ترمیمات کرنے والی ہے۔ اب اس نے ایک نئی پالیسی وضع کی ہے اور ساتھ ہی اپنا موقف ظاہر کرتے ہوئے ایک بیان میں کہا ہے کہ ہماری جد و جہد یہودیوں یا یہودیت کے خلاف نہیں ہے بلکہ صیہونی قبضہ اورصیہونی عزائم کے خلاف ہے۔اس سے یہ اشارے ملتے ہیں کہ حماس اپنا بین الاقوامی پوزیشن میں سدھار لانا چاہتی ہے۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق حماس نے نئی پالیسی دستاویز جاری کی ہے جس میں پہلی بار 1967 سے قبل کی سرحدوں کے مطابق غزہ، مغربی کنارے اور مشرقی یروشلم میں فلسطینی ریاست کے قیام پر باقاعدہ رضامندی ظاہر کی ہے۔
حماس کے ترجمان فوزی برہون کا کہنا ہے کہ اس پالیسی دستاویز کے ذریعہ سے انہیں بیرونی دنیا سے منسلک ہونے کا موقع ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم حقیقت پسند اور مہذب قوم ہیں، ہم یہودیوں سے نفرت نہیں کرتے بلکہ دنیا کے لیے ہمارا پیغام ہے کہ قدامت پسند نہیں ہیں۔یاد رہے کہ اسرائیل ، امریکہ اور بہت سے پورپی ممالک حماس کو دہشت گرد تنظیم قرار دیتے ہیں اور اس تنظیم سے کسی قسم کے رابطے کو غیر قانونی سمجھتے ہیں۔دوسری جانب اطلاع ہے کہ آئندہ ہفتے میں فلسطین کے صدر محمود عباس ، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات کرنے جا رہے ہیں۔ اس ملاقات سے قبل حماس کی جانب سے پالیسی دستاویز کا جاری ہونا، دو طرفہ فضا کو خوشگوار بنانا ہے۔ غزہ کی عوام ، حماس کی اس کوشش کو عوامی حمایت حاصل کرنے کا ایک طریقہ شمار کر رہی ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Our struggle is against the zionist occupation not against jewshamas in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News
Tags: ,

Leave a Reply