مالدیپ میں حزب اختلاف کے ممبران پارلیمنٹ گرفتار کیے جانے کے اندیشوں میں گرفتار

مالے: مالدیپ میں ایمر جنسی کے نفاذ کے چند گھنٹے بعد ہی سابق صدر مامون عبد القیوم ، چیف جسٹس عبداللہ سعید اور سپریم کورٹ کے جج علی حامدکی گرفتاری کے باعث ملک کی حزب اختلاف کے اراکین پارلیمنٹ میں خوف و ہراس کی لہر دوڑ گئی ہے کہ اب اگلا ہدف ا نہیں بنایا جا سکتا ہے۔
سینیئر وکیل اور سابق اٹارنی جنرل حسنو سعود صدر عبد اللہ یامین کو اپنے فیصلہ کو پارلیمنٹ سےمنظور کر انے کے لیے48گھنٹے کے اندر اندرون ملک ایمرجنسی ڈکلیئر کرنے کے اسباب بتانا ہوں گے۔اور اگر پارلیمنٹ نے ایمرجنسی کے نفاذ کے اعلان کی توثیق نہ کی تو ملک میں ایمرجنسی کا نفاذ ٹائیں ٹائیں فش ہو جائے گا۔اسی توثیق حاصل کرنے کے پیش نظر ہی حزب اختلاف کے اراکین پارلیماں کی گرفتاری کی جا سکتی ہے۔
واضح رہے کہ ایمرجنسی کا اعلانہوتے ہی فوج سپریم کورٹ میں گھس گئی اور چیف جسٹس اور ایک جج کو گرفتار کر لیا۔لیکن سپریم کورٹ کے دو دیگر ججوں کا کوئی اتہ پتہ نہیں ہے۔

Title: now maldives opposition mps fear arrest | In Category: دنیا  ( world )
Tags:

Leave a Reply