افغانستان میں جاری کشمکش کا کوئی فوجی حل نہیں ہے: اقوام متحدہ سربراہ

اقوام متحدہ:اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انٹونیو گوٹرش نے کہا ہے کہ افغانستان میں جاری کشمکش کا، جس کے باعث متعدد افغان باشندے نقل مکانہ کر رہے ہیں، کوئی فوجی حل نہیں ہے۔ غیرا علانیہ دورے پر اچانک افغانستان کے دارالخلافہ کابل پہنچنے کے بعد انہوں نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان اس وقت مشکل ترین حالات کا سامنا کر رہا ہے جہاں تشدد اور خونریزی جاری ہے۔ میں ان حالات میں افغان حکومت اور عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے آیا ہوں۔انٹونیو گوٹرش نے کہا کہ وہ اقوام متحدہ کی طرف سے افغانستان کے لیے ہمدردی کا پیغام لیکر آئے ہیں۔ میں اس دورے کے دوران افغان صدر اور عوام کے ساتھ بات چیت کرنا چاہتا ہوں۔
اقوام متحدہ نے ہر دور میں چاہے حالات جیسے بھی ہوں افغانستان کا بھرپور ساتھ دیا ہے اور آئندہ بھی ہماری نیک خواہشات افغان عوام کے ساتھ ہوں گی۔واضح رہے کہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل ایک ایسے وقت میں افغانستان کا دورہ کر رہے ہیں جب دہشت گردوں کی طرف سے پچھلے کچھ دنوں میں سخت ترین دھماکے کئے گئے ہیں جس کے نتیجے میں 180افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ جبکہ افغان حکومت سیکیورٹی کو بہتر کرنے میں مسلسل ناکام جا رہی ہے اور ہر حملے کا الزام بغیر سوچے سمجھے پاکستان پر لگا دیا جاتا ہے۔ امید ہے کہ افغان حکومت افغانستان کے اندر موجود دہشت گردوں کی بیخ کنی کر کے افغانستان میں امن قائم کرنے میں کامیاب ہو جائے گی۔اس سے قبل اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کے نمائندہ خصوصی برائے افغانستان یادا میچی یاما موتو نے کابل پہنچنے پر انٹونیو گو ٹیریس کا استقبال کیا۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: No military solution in afghanistan u n chief says on kabul visit in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply