میکسیکو میں شدید زلزلہ،248ہلاک

میکسیکو سٹی: میکسیکو کے دارالخلافہ میکسیکو سٹی اور اسکے مضافات میں زبردست زلزلہ آیا جس میں کم از کم248ہلاکتیں ہوئی ہیں۔ حکام کے مطابق ریختر پیمانے پر اس زلزلہ کی شدت7.1 ماپی گئی ہے۔ اس زلزلہ میں ایک پرائمری اسکول بھی تباہ ہو گیا جس میں کم از کم21بچے ملبہ میں دب کر ہلاک ہو گئے۔ امریکی جیوولوجی سروے نے بتایا کہ زلزلہ کا مرکز میکسیکو سٹی سے 120 کلومیٹر دور پیوبلا صوبہ کے اٹینسیگو کے قریب تھا ہے اور یہ 51 کلو میٹر کی گہرائی میں واقع تھا۔
یہ زلزلہ میکسیکو کے اس زلزلہ کی عین32 برسی والے دن آیا ہے جو 1985میںآیا تھا جس میں سیکوڑوں کی تعداد میں ہلاکتیں ہوئی تھیں اور جسے میکسیکو کی تاریخ کا بھیانک ترین زلزلہ کہا جاتا ہے۔نائب وزیر تعلیم جیویر ٹریوی نو کے مطابق سب سے زیادہ بھیانک اور دلخراش منظر انریک ریبسامین اسکول کا تھا جس کی تین منزلیں زمین دوز ہو گئیں ۔جس کے ملبہ کے نیچے دب کر21بچے اور 4اساتذہ ہلاک ہو گئے۔مزید30بچے اور عملہ کے8افراد ابھی تک لاپتہ ہیں۔
زلزلہ کے شدید جھٹکوں کی وجہ سے میکسیکو سٹی میں متعدد عمارتیں منہدم اور117ہلاکتیںہوئیں ۔ زلزلہ اتنا شدید تھا کہ یہاں کی دو رہائشی عمارتیںد ائیں بائیں ڈول رہی تھیں اور ایسا لگ رہا تھا کہ دونوں ایک دوسرے کو چھونے کی کوشش میں ہیں۔
میکسیکو سٹی کے جنوبی مضافات میں واقع صوبہ موریلوس میں بھی زلزلہ سے بہت زیادہ تباہی ہوئی ہے ، جہاں 55 ہلاکتیں بتائی جاتی ہیں۔ وزیر داخلہ میگوئیل اینجل اوسوریو چونگ کے مطابق ریسکیو کارکنان ملبے میں زندہ افراد کی تلاش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا ”ہمیں ایسی اطلاع ملی ہے کہ کچھ لوگ ابھی بھی عمارتوں میں پھنسے ہوئے ہیں ۔ اگرمزید راحتی کارکنوں کی خدمات حاصل کرنے کی ضرورت تو انہیں بھی بچاؤ کاموں کے لیے طلب کر لیا جائے گا۔
میکسیکو کے صدر نے عوام سے درخواست کی ہے کہ وہ سڑکوں پر نہ نکلیں تاکہ امدادی کارروائیوں میں کسی قسم کی رکاوٹ نہ آسکے۔ عوام سے سگریٹ نوشی نہ کرنے کی بھی درخواست کی گئی ہے کیونکہ زلزلے سے کئی گیس پائپ لائنیں بھی پھٹ گئی ہیں جس سے گیس کا رساؤ شروع ہو سکتا ہے اس لیے خدشہ ہے کہ سگریٹ کی چنگاری کہیں بھیانک آتشزدگی کا شاخسانہ نہ بن جائے ۔زلزلے سے متاثرہ علاقوں میں فون رابطہ ٹوٹ گیا اور بجلی فراہمی کا سلسلہ بھی منقطع ہو گیا جسکے باعث38 لاکھ افراد بغیر بجلی کے ہیں۔

Title: mexico earthquake 248 dead in powerful earthquake in Urdu | In Category: دنیا  ( world ) Urdu News

Leave a Reply