بلوچستان میں ملا منصور کی ہلاکت افغانستان کے خلاف پاکستان کی خفیہ جنگ کا ایک اور ثبوت

کابل: افغان انٹیلی جنس،نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سیکورٹی کے سابق سربراہ عمر اللہ صالح نے کہا ہے کہ پاکستان میں طالبان قائد ملا اختر منصور کی ہلاکت نے افغان عوام کے ان جائز دعوؤں کو ایک بار پھر درست ثابت کر دیا ہے کہ افغانستان میں جاری جنگ نسلی جنگ نہیں بلکہ افغانستان پر تھوپی گئی پاکستان کی پراکسی جنگ ہے۔
صالح نے مزید کہا کہ ملا اختر منصور کی ہلاکت افغان عوام کے لیے ایک خوشخبری ہے کیونکہ گذشتہ ایک سال کے دوران اس نے ہزاروں افغان باشندوں کو موت کے گھاٹ اتارا ہے۔
پنٹاگون اور حکومت افغانستان دوبنوں نے ہی اس امر کی تصدیق کر دی کہ بلوچستان کے جنوب مشرقی شہر احمد وال میں ایک فضائی حملہ میں ملا اخترمنصور کی گاڑی کو نشانہ بنا کر ڈرون حملہ کیا گیا تھا۔
صالح نے مزید بتایا کہ طالبان کے سابق رہنما ملا عمر کی بھی پاکستان میں ہی موت ہوئی اور ملا اخترمنصورکا ان کا جانشین اعلان کیا گیا لیکن اس نے بھی طالبان کی پالیسیوں اور افکار ونظریات میں کوئی تبدیلی نہیں کی بلکہ اس کے برعکس افغان عوام پر ظلم و ستم میں مزید اضافہ کر دیا۔انہوں نے کہا کہ ملا منصور کی موت سے افغانستان میں سیاسی و فوجی نوعیت سے مزید امکانات کے نئے دروازے کھلیں گے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Mansoors death in pakistan proves imposed proxy war on afghan nation saleh in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply