شہنشاہ جاپان کو اپنی مرضی سے تخت شاہی سے دستبرداری کا حق دینے لیے پارلیمنٹ میں قانون منظور

ٹوکیو: جاپان کی پارلیمنٹ نے آج ایک قانون کومنظوری دے دی ہے جس کی رو سے شہنشاہ اکی ہیتو اپنی مرضی سے شہنشاہ کا عہدہ چھوڑ سکتے ہیں اور اپنے بیٹے پرنس ناروہیتو کے لئے راہ ہموار کر سکتے ہیں۔ پارلیمنٹ کی جانب سے منظوری ملنے کے بعد گزشتہ تقریبا 200 برسوں کے دوران یہ پہلی بار ہوگا جب جاپان کا کوئی شہنشاہ اپنا عہدہ چھوڑے گا۔ شہنشاہ اکی ہیتو کے عہدے چھوڑنے کے بعد ان کے بیٹے شہزادہ ناروہیتو اگلے سال کے آخر تک جاپان کے شہنشاہ کا عہدہ سنبھال سکتے ہیں۔
غور طلب ہے کہ 83 سالہ شہنشاہ اکی ہیتو بہت صحت سے متعلق مشکلات میں مبتلا ہیں۔ جاپانی شہنشاہ کے دل کا آپریشن ہونے کے علاوہ پروسٹیٹ کینسر کا علاج بھی ہوچکا ہے۔ گزشتہ سال شہنشاہ اکی ہیتو نے عوامی طور پر کہا تھا کہ عمر کے اس پڑاؤ کی وجہ ان کے لئے اپنے فرائض پر عمل کرنا کافی مشکل ہو گیا ہے۔ شیریں زبان شہنشاہ اکی ہیتو نے کئی دہائی تک ملک اور بیرون ملک کام کرکے دوسری عالمی جنگ کے زخموں کو بھرنے کا کام کیا ہے۔ شہنشاہ اکی ہیتو کے بعد ان کے 57 سالہ بیٹے پرنس ناروہیتو جاپان کے اگلے شہنشاہ ہوں گے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Japans parliament passes historic law to allow 83 year old emperor in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply