توہین اسلام کے جرم میں جکارتہ کے عیسائی گورنر کو دو سال کی سزائے قید

جکارتہ: انڈونیشیا کی ایک عدالت نے جکارتہ کے عیسائی گورنر باسو کی جہاجا پورنامہ المعروف آہوک کو اہانت اسلام کا مرتکب پایا ہے اور انہیں دو سال جیل کی سزا سنائی ہے۔ ہیڈ جج دیویارسو بودی سانتیار تو نے عدالت کو بتایا کہ ”پورناما کو“ قانوناًً اور بلاشبہ اہانت اسلام کی مجرمانہ حرکت کا مرتکب پایا گیا ہے۔
جس کی وجہ سے انہیں دو سال قید کی سزاسنائی گئی ہے۔اپریل میں دوران سماعت استغاثوں نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ ان پر توہین مذہب کے الزامات واپس لے کر منافرت پھیلانے والے ہلکے الزامات عائد کیے جائیں لیکن ججوں نے اس سفارش کو ماننے سے انکار کر دیا۔چینی نژاد عیسائی سیاست داں آہوک پر اپنی انتخابی مہم کے دوران اسلام کے حوالے سے قابل اعتراض جملے استعمال کرنے کے الزامات میں دسمبر میں مقدمہ دائر کیا گیا تھا۔
لیکن آہوک نے ان الزامات کی تردید کی اور کہا کہ وہ اس سزا کے خلاف اپیل کریں گے۔واضح رہے کہ انہوں نے اپنے حامیوں کی حمایت میں قرآن کی ایک آیت کا حوالہ دیا تھا کہ مسلمانوں کو غیر مسلم سیاست داں کو ووٹ دینے سے نہیں روکا گیا ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Jakarta governor ahok found guilty in landmark indonesian blasphemy trial in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply