جماعت اسلامی کا کارکن بنگلہ یونیورسٹی پروفیسر کے قتل کے الزام میں گرفتار

سبھاش چوپڑا

انہیں آپ داعش کے نام سے پکاریں یا دولت اسلامیہ کے نام سے، انہیں وہابی کہیں ،طالبان کہیں یا جماعتی بنیاد پرست پکاریںوہ اس مذہب اسلام کے نام پر خونریزی کر ہے ہیں جو امن کا درس دیتا ہے۔ان کے آسان ہدف آزاد و روشن خیال مفکر یا سیکولر اسکالرز، طلبا، اور پرفیسرز ہوتے ہیں ۔جو خاص طورپر بنگلہ دیش جیسے کمزور ممالک میںجہاں گذشتہ سنیچر کوراج شاہی یونیورسٹی کے ایک پروفیسر رضاءالکریم صدیقی کا سر قلم کر دیا گیا۔ یہی نہیں بلکہ 15روز پہلے ہی قانون کے ایک طالبعلم کو ہلاک کر دیا گیا تھا جس سے محض ایک ماہ میں ہی دو قیمتی زندگیاں انتہا پسندوں کی بھینٹ چڑھ گئیں۔علاوہ ازیں اس سال کے اوائل میں مندر کے ایک پجاری کو بھی بنیاد پرستوں نے موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔
58سالہ پروفیسر رضا ءالکریم صدیقی کے قتل کے الزام میں جماعت اسلامی کے طلبا بازو اسلامی چھاتر شیبیر کے ایک کارکن طالبعلم حفیظ الرحمٰن کو پولس نے گرفتار کر لیا۔
صدیقی کو ہلاک کرنے کے لیے انتہا پسندوں نے ان کی گردن پر کم از کم تین بار چھری پھیری اور تقریباً70/80فیصد گردن لٹک گئی ۔جس سے ان کی موت واقع ہو گئی۔دولت اسلامیہ نے، جس نے اس قتل کی ذمہ داری لی،دعویٰ کیا کہ وہ ایک دہریہ تھاجبکہ یونیورسٹی میں ان کے سینیئرنے اس کی تردید کی۔صدیقی نے بچوں کو موسیقی سکھانے اور ربندر ناتھ ٹیگور اور قاضی نذر الاسلام کی شاعری سے روشناس کرانے کے لیے اپنے گاو¿ں میں ایک اسکول کھولا تھا ۔ صدیقی حالیہ برسوں میں مارے جانے والی راج شاہی یونیورسٹی کی چوتھی شخصیت ہیں۔
گذشتہ سال بنگلہ دیش میں آزاد و روشن خیال سات شخصیات کو جن میں مضمون نگار، پبلشرز اور سماجی کارکن شامل ہیں دن دھاڑے بائیک سواروں نے ہلاک کر دیا تھا۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Islamic activist arrested for killing bangladesh university in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply