میں یہ کبھی نہیں بھول سکتا کہ گجرات زلزلہ کے وقت مدد کرنے والا پہلا ملک ایران تھا: مودی

تہران :وزیر اعظم ہندوستان نریندر مودی کا تہران پہنچنے پر والہانہ استقبال کیا گیا۔تہران پہنچنے کے بعد ہندوستانی و ایرانی وفود کے درمیان مذاکرات سے پہلے مودی اور صدر ایران حسن روحانی کے درمیان کئی معاملات پر تبادلہ خیال ہوا۔دونوں ملکوں کے درمیان10دو طرفہ معاہدوں پر دستخط ہوئے جس میں ایرانی بندر گاہ چابہار کے راستے ہندوتان کو افغانستان سے ملانے والا معاہدہ بی شامل ہے۔
تجارت کو فروغ دینے والے اس اہم سہ طرفہ معاہدہ پر وزیر اعظم نریندر مودی نے بذات خود دستخط کیے۔ دیگر دستخط کرنے والوں میں صدر ایران روحانی اور صدر افغانستان اشرف غنی ہیں۔ وفد سطح کی بات چیت کے دوران دونوں ملکوں میں ہونے والے12 معاہدوں پر مودی اور روحانی کی موجودگی میں دستخط کیے گئے۔ایرانی صدر حسن روحانی نے اخباری بیان میں کہا کہ ایران نے ہندوستان کے ساتھ، جو ایک بڑی طاقت ہے، اپنے تعلقات کو ہمیشہ نہایت اہمیت دی ہے ۔
انہوں نے کہا کہ دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی تعلقات ماضی کی نسبت زیادہ وسیع ہو سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ان کی مودی کے ساتھ سیاحت کے علاوہ دونوں ملکوں میں ہندی اور فارسی میں نصاب پر بھی تبادلہ خیال کیا۔انہوں نے کہا کہ ہم دونوں نے اس بات پر بھی تبادلہ خیال کیا کہ خفیہ معلومات کے تبادلہ کیسے کیا جا سکتا ہے اور دہشت گردی کے خلاف ہم ایک دوسرے سے کتنا قریبی تعاون کر سکتے ہیں۔نریند مودی نے کہا کہ ان کے لیے دورہ ایران باعث صد افتخار ہے ۔ ہندوستان اور ایران کوئی نیے دوست نہیں ہیںزمانہ قدیم سے ہی ایرانی ورثہ کا حسن اور امارت پوری دنیا کو ایرسان کی جانب متوجہ کرتی رہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ دوست اور پڑوسی ہونے کے ناطے ہم دونوں نے ایک دوسرے کی نشوونما ترقی اور خوشحالی ،خوشی و غم اوراچھے و برے حالات ایک دوسرے کا ساتھ دیا ہے اور ایک دوسرے کے مفاد کا خیال رکھا ہے۔انہوںنے کہا کہ وہ یہ بات کبھی نہیں بھول سکتے کہ 2001میں جب میری ریاست گجرات میں زلزلہ آیا تو مدد کے لیے سامنے آنے والا پہلا ملک ایران تھا۔

Title: india iran sign 12 agreements | In Category: دنیا  ( world )

Leave a Reply