اس ملک میں سڑکوں پر نوٹوں کے بنڈل کلو کے بھاو بکتے ہیں

نئی دہلی: ہم اکثر لوگوں کے منہ سے سنتے ہیں کہ نا باپ بڑا نہ بھیا، سب سے بڑا روپیہ۔ ہم سبھی کی جیب میں جب یہ کڑے کڑے نوٹ ہوتے ہیں تو ایک غضب کااعتماد بھی ساتھ ہوتا ہے۔ آخر ان نوٹوں میں ایسا کیا ہے ، ان کے نا رہنے سے انسان کا کااعتماد ہی ختم ہو جاتا ہے۔

دنیا کے مختلف ممالک میں نوٹوں کے بھی الگ- الگ قصے ہیں۔ کیا آپ کو معلومہے کہ ایک ملک ایسا بھی ہے ، جہا ں نوٹوں کے بنڈل کلو کے بھاو ملتے ہیں۔

جی ہاں ، افریقی ملک سومالیلنڈ میں سڑکوں پر نوٹوں کے بنڈل بکتے ہیں۔وہاں کے لوگ بتاتے ہیں کہ سال 1991 میں ہوئی خانہ جنگی کے بعد سومالیہ سے الگ ہو کر سومالیلینڈ بن گیاتھاسومالیلنڈ کو اب تک کسی بھی ملک نے بین الاقوامی طور منظوری نہیں دی ہے۔

ظاہر ہے کہ یہ ملک بےحد غریبی سے دو چار ہے۔ یہاں نہ کوئی سرکاری نظام نافذ ہو پایاہے اورنہ ہی کوئی روزگار ہے۔سومالیلنڈ کی کرنسی شیلنگ ہے، جس کا کسی بھی ملک میں کوئی وجود نہیں ہے۔ علاوہ ازیں یہاں کرنسی کی قیمت اتنی بڑھ گئی ہے کہ اگر بریڈ بھی خریدنی ہو تو بورے میں بھر کر نوٹ لینے اور دینے پڑتے ہیں۔

یہیں وجہ ہے کہ یہاں صرف 500اور 1000روپیے کے بڑے نوٹ ہی چلن میں ہیں۔ سومالیلنڈ کے بازار میں 1 امریکی ڈالر کے بدلے 9000شیلنگ ملتے ہیں۔میڈیا خبروں کے مطابق قریب 650 روپیے میں 50 کلو سے ذیادہ شیلنگ خریدے جا سکتے ہیں۔

ظاہر ہے اس سے کوئی فائدہ نہیں ہے ، ایک جانب اس کو لانا لے جانا مشکل ہے اور دوسری جانب اتنی رقم دینے کے بعد بھی آپ کو سامان بہت کم ملے گا۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: In somaliland street vendors exchange stacks of money on the street as if selling vegetables at the market in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.