سحری و افطاری کا وقت بتانے کے لیے کہیں سائرن بجتا ہے تو کہیں توپ کا گولہ داغے جانے کی روایت

دوبئی:آج کل دنیا بھر کے مسلمان ماہ رمضان کے روزے رکھ رہے ہیں اور اس مقدس مہینے کی برکتوں سے مستفید ہو رہے ہیں، یہ وہ مہینہ ہے کہ جس میں اللہ تعالی جہنم کے دروازے بند کر دیتا ہے اور جنت کے کھول دیتاہے، اسی مہینے میں لیلة القدر بھی آتی ہے۔یہ وہ رات ہے جس کو قرآن میں ہزار مہینوں کی راتوں سے بھی افضل کہاگیا ہے۔مسلمان ماہ رمضان میں سحری اور افطاری میں طرح طرح کے پکوانوں کا اہتمام کرتے ہیں ، نیازیں غریبوں میں تقسیم کی جاتی ہیں، ایک دوسرے کے گھر افطاری بھیجی جاتی ہے،روزے کھلوائے جاتے ہیں اور ایک دوسرے کو افطار پر مدعو کرتے ہیں اور اس طرح اللہ کی رضا حاصل کی جاتی ہیں۔
یہاں یہ بات خاص طور پر قابل ذکر ہے کہ اسلامی ممالک ہی نہیں بلکہ ہندوستان میں بھی سحری اور افطاری کے اوقات کے اعلان کے لیے مختلف اور دلچسپ انداز اور روایات پائی جاتی ہیں جیسا کہ دبئی میں آج کل بھی توپ کے گولے داغ کر افطاری کے ٹائم کا اعلان کیا جاتا ہے۔ افطار کے وقت پورا دبئی شہر توپوں کی آواز سے گونج اٹھتا ہے۔دبئی میں پانچ عوامی مقامات پر توپیں نصب کی گئی ہیں جن سے ہر روز افطاری کے وقت گولے داغ کر افطاری کے وقت کا اعلان کیا جاتا ہے، جس کے بعد روزے دار روزہ کھولتے ہیں، جبکہ یہ مناظر دیکھنے کے لیے سینکڑوں لوگ ان مقامات کا رخ کرتے ہیں۔
پاکستان بنگلہ دیش اور ہندوستان میں آجکل سائرن بجا کر سحری اور افطاری کے اوقات کا اعلان کیا جاتا ہے جبکہ پرانے وقتوں میں کچھ لوگ ڈھول بجا بجا کر لوگوں کو سحری کے لیے بیدار کیاکرتے تھے ۔ ہندوستان،پاکستان اور بنگلہ دیش میں سحری کے اختتام کے اعلان کے لیے سائرن کے علاوہ سحری کا وقت کے ختم ہونے سے پہلے ا سپیکر کے ذریعے” سحری کھانے والوں سحری کر لیں ، سحری کا وقت ختم ہونے میں دس منٹ باقی ہیں“ کے جملے کے ساتھ اعلان کر کے لوگوں کو جلدی جلدی سحری کھا لینے کی تاکید کی جاتی ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Iftar cannon resound through ages in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News
Tags:

Leave a Reply