فرانس میں پہلے مرحلہ کی پولنگ کے نتائج کا اعلان ہوتے ہی تشدد، 29سیاسی کارکن گرفتار

پیرس:فرانس میں صدارتی انتخابات کا پہلا مرحلہ مکمل ہوتے ہی شکست خوردہ امیدواروں کے حامیوں نے بڑے پیمانے پر پتھراو¿، شیشہ باری، معمولی نوعیت کے دھماکے اور آتشزدگی کی وارداتیں کر کے احتجاج کو تشدد میں بدل دیا۔ حالات پر قابو پانے کے لیے پولس کو سخت کارروائی کرنا پڑا اور اس نے مظہرین کو منتشر کرنے کے ساتھ 29افراد کو حراست میں لے لیا۔ واضح رہے کہ اس انتخابی دوڑ میں شامل پانچ اہم امیدواروں میں سے دو امیدوار لی پین اور مارکن ایمینیول دوسرے مرحلے کے لیے کوالیفائی کر گئے ہیں۔ پہلے مرحلے میں امینیول نے42فیصد جبکہ ماری لاپین نے12فیصد ووٹ حاصل کیے تھے۔ موصول اطلاع کے مطابق ہارنے والے امیدواروں کے حامیوں نے ملک بھر میں احتجاج کا سلسلہ شروع کر دیا ہے۔فرانسیسی ذرائع کے مطابق پیرس میں مظاہرین نے احتجاج کے دوران متعدد گاڑیوں کو نذر آتش کر دیا ہے۔ پولیس نے ہنگامہ برپا کرنے کے الزام میں دو افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ مظاہرین قوم پرست امیدوار ماری لی پین کے پالیسیوں کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔مظاہرین کی طرف سے توڑ پھوڑ کی گئ ی جبکہ پولیس نے مظاہرین کو روکنے کے لیے ا?نسو گیس کے شیل پھیکنے۔ مشتعل مظاہرین نے متعدد گاڑیوں کو نذر ا?تش کر دیا۔ مظاہروں کو روکنے کی خاطر پولیس نے ملک بھر سے گرفتاریوں کا سلسلہ شروع کر دیا ہے۔ امیدوار ماری لی پین اور امینیول نے توڑ پھوڑ اور ا?گ لگانے کے واقعات کی مذمت کی ہے۔سابق صدر اولاند نے کہا ہے کہ لی پین ملک کے لیے خطرہ ہیں اور میں میکرون کو ووٹ دوں گا۔ جبکہ امینیول میکرون کا کہنا ہے کہ میں فرانس کی ساری عوام کے لیے صدر بنوں گا۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: French presidential election leftist protesters grow violent after results come in in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply