ٹرمپ نے مسلم دشمنی کا کھلا مظاہرہ کرتے ہوئے وائٹ ہاؤس میں افطار پارٹی کی روایت ختم کر دی

واشنگٹن:صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ نے صدر منتخب ہوتے ہی جو نت نئے احکام و فرما جاری کر کے ایک دنیا کو حیران کر رکھا ہے وہیں انہوں نے واؤٹ ہاؤس میں سالانہ افطار پارٹی کی روایت توڑ کر سب کو ششدر کر دیا۔ گذشتہ دو عشروں سے وائٹ ہاوس کی روایت رہی ہے کہ وہ مسلمانوں کو ماہ رمضان میں افطار پارٹی دیا کرتے تھے اور عید کے موقع پر عید ملن پارٹی کا اہتمام کیا کرتے تھے، لیکن ڈونلڈ ٹرمپ نے آتے ہی اس روایت کو ختم کر دیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق امریکی صدر نے مسلمانوں سے دشمنی کی ساری سرحدیں پار کر دی ہیں۔ انہوں نے سابقہ روایات کے برخلاف نہ افطار پارٹی کا انتظام کیا اور نہ ہی عید ملن پارٹی کا۔ جبکہ ان سے پہلے والے تمام امریکی صدر باقاعدگی سے مسلمانوں کے اعزاز میں افطار پارٹیاں دیتے رہے ہیں لیکن اب اس روایت کو توڑ دیا گیا ہے۔ اس سال امریکی وزارت خارجہ کی طرف سے نہ ہی کسی تقریب کا اعلان کیا گیا اور نہ ہی صحافیوں کو دعوت دی گئی تھی۔
واضح رہے کہ وائٹ ہاوس میں افطار پارٹی کا آغاز1996 میں سابق امریکی صدر بل کلنٹن کی طرف سے کیا گیا تھا، جسے جارج بش اور اوبامہ نے جاری رکھا تھا۔ جبکہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ شروع ہی سے اسلام اور مسلمانوں کی خلاف سخت رویہ اپنائے ہوئے ہیں۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Donald trump ends decades long white house tradition of celebrating ramadan with iftar dinner in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply