لندن میں ایک17سالہ کرد ایرانی لڑکے کو نسلی تشدد کا نشانہ بنانے والے 9گرفتار

لندن: جنوبی لندن میںایک17سالہ کرد ایرانی پناہ گزیں پرقاتلانہ حملہ کرنے کے الزام میںپولس نے مزید تین افراد کو گرفتار کر لیا جس سے اس معاملہ میں گرفتار شدگان کی تعداد بڑھ کر 9ہو گئی۔ یہ حملہ جنوبی لندن میں 20 حملہ آوروں کے گروپ نے کیا تھا۔ تفتیش کاروں نے اس حملے کو نسل منافرت کا جرم قرار دیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس حملے میں ایک 17 سالہ کرد نژااد ایرانی لڑکے کو شدید چوٹیں آئی ہیں۔
یہ حملہ جمعہ کی شب کو ایک بس اسٹینڈ پر کیا گیا تھا۔ انسپکٹر گیرے کیشل نے بتایا کہ ایسا سمجھا جاتا ہے کہ مشتبہ حملہ آوروں نے متاثرہ کمسن لڑکے سے پوچھا کہ وہ کہاں کا باشندہ ہے اور جب انہیں معلوم ہوگیا کہ وہ پناہ گزیں ہے تو اس پر وحشیانہ حملہ کردیا اور اس کے سر پر اس قدر وار کیے کہ وہ بیہوش ہو کر گر پڑا۔ پولس نے بتایا کہ زخمی نوجوان فی الحال اسپتال میں زیر علاج ہے۔ اس کی حالت نازک مگر مستحکم ہے۔ دریں اثنا لندن کے میئر صادق خان نے کہا ہے کہ حملہ آوروں کو ہرحال میں انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے گا۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Croydon hate crime three more held in hunt for teenagers attackers in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply