چینی صدر شی جن پنگ نے چین کی سب سے بڑی شین چینگ مسجد کا خصوصی دورہ کیا

بیجنگ:چین کے صدر شی جن پنگ نے مسلم اکثریت والے مغربی چین کی ایک مسجد کا دورہ کرتے ہوئے کہا کہ چین کے مسلمانوں کو سماجی بھائی چارے کوفروغ دینا چاہیے اور غیر ملکی دہشت گردوں کو ملک میں علیحدگی پسندی کو فروغ دینے سے روکنا چاہیے۔
چین میں تقریباً دو کروڑ 10لاکھ مسلمان رہتے ہیں جو پرتشدد مغربی صوبے ڑنجیانگ سے ہوئی تک پھیلے ہوئے ہیں۔چین کا آئین مذہبی آزادی کی گارنٹی دیتاہے لیکن انسانی حقوق گروپوں کا کہنا ہے کہ برسر اقتدار کمیونسٹ پارٹی مذہبی سرگرمیوں خاص طور پر مسلمانوں پر پابندی لگاتی ہے لیکنچین ان الزامات کی تردید کرتا ہے۔
چین کے سرکاری روزنامے میںآج شائع رپورٹ کے مطابق مسٹر جنپنگ نے تقریباً 20لاکھ 40ہزار ہوئی مسلم اکثریت ننگشیا کا دورہ کرتے ہوئے کہا کہ مسلمانوں کو چین کے سماج کے حصے کے طورپر اپنے مذہب کو ماننا چاہیے اور وطن پرستی کی روایت کو آگے بڑھانا چاہیے۔
انہوں نے کہا کہ چین میں مذہب مقامی ہے اور غیر ملکوں سے آئے لوگ بھی 5000سال پرانی چینی ثقافت میں رچ بس گئے ہیں اور وہ ملک کو خوش حال بناتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کوغیر ملکی دہشت گردوں کو ملک میں علیحدگی پسندی کو فروغ دینے سے روکنا چاہیے اور مذہبی اور سماجی بھائی چارے کوفروغ دینا چاہیے۔
چین کی حکومت کا کہنا ہے کہ وہ خصوصاً ژنجیانگ میں اسلامی انتہاپسندی کا سامنا کر رہی ہے،جہاں حال کے برسوں میں سیکڑوں لوگ مارے گئے۔بیجنگ اس کے لئے غیر ملکی انتہاپسندوں کو ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے ،ڑنجیانگ میں علیحدگی پسند الگ ملک مشرقی ترکستان قائم کرنا چاہتے ہیں۔
کئی انسانی حقوق گروپ ژنجیانگ میں دہشت گرد گروہوں کی موجودگی پر شبہ ظاہر کرتے ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ تشدد کےلئے چینی پالیسیوں کے سلسلے میں یغورمسلمانوں کا غصہ ذمہ دار ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Chinese president xi jinping visits xincheng mosque in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply