چین پہلی مال بردار خلائی گاڑی اپریل میں داغ سکتا ہے

بیجنگ:چین 2022 تک مستقل طور پر انسان کی رہائش والے خلائی اسٹیشن قائم کرنے کے ہدف کو حاصل کرنے کے مقصد سے اپریل میں اپنے پہلے مال بردار جہاز کی لانچنگ کی تیاری کر رہا ہے۔ کمیونسٹ پارٹی کے اخبار پیپلز ڈیلی کے پہلے صفحے پر شائع خبر کے مطابق صدر شی جن پنگ نے ملک کے خلائی پروگرام کو فروغ دینے کو ترجیح دی ہے۔
انہوں نے کہا کہ قومی سلامتی اور دفاع کو مضبوط کرنے کی ضرورت ہے۔ رپورٹ میں چین کی خلائی ایجنسی کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ جنوبی چین کے جزیرے صوبے نانہائی کے وھینچاگ سیٹلائٹ لانچ مرکز سے ایک لانگ مارچ۔7 وائی 2 راکٹ کے ذریعے تیانجھوؤ -1 نامی مال بردار جہاز کو خلا میں لانچ کیا جائے گا۔تیانجھوؤ -1 کو تانگوگ۔ 2 خلائی لیبارٹری کے ساتھ منسلک رہنے کے لئے ڈیزائن کیا گیا ہے جس کا استعمال چین نے گذشتہ سال اکتوبر میں سب سے طویل انسانی خلائی مشن کے لئے کیا تھا۔
اس مشن میں تجربہ گاہ پر ایک ماہ کے لئے دو خلائی مسافروں کو بھیجا گیا تھا۔ اخبار کے مطابق جہاز چھ ٹن سامانوں کے علاوہ دو ٹن ایندھن ڈھو سکتا ہے اور انسان کے بغیر تین ماہ تک پرواز کر سکتا ہے۔ چین کی طرف سے اپنے خلائی پروگرام کو فوج، پیشہ ورانہ اور سائنسی مقاصد کو ذہن میں رکھ کر بنائے جانے کے باوجود وہ امریکہ اور روس سے پیچھے ہے۔

Title: chinas plans launch of first cargo spacecraft in april | In Category: دنیا  ( world )

Leave a Reply