تحویل اراضی کے خلاف مظاہرہ کرنے پر چین میں9افراد کو 10سال کی قید

بیجنگ:جنوبی چین کی ایک عدالت نے ماہی گیروں کے ایک گاؤں کے ،جس میں تحویل اراضی کے خلاف مظاہروں نے پوری دنیا کو اپنی طرف متوجہ کر لیا تھا، نو افراد کو غیر قانونی اجتماع اور دیگر الزامات کے معاملے میں2تا دس سال کی سزا ئے قیدسنائی ہے۔
ہفنگ کاؤنٹی کی عدالت نے ایک فیصلہ میں کہا کہ غیر قانونی طور پر جمع ہونے، مظاہرہ کرنے، ٹریفک میں رکاوٹ پیدا کرنے اور افواہ پھیلانے کے جرم میں یہ سزا سنائی گئی ہے۔ گوانگ ڈونگ صوبے کے ووکان میں ستمبر کے مہینے میں مظاہرہ کیا گیا تھا۔ یہاں کے ایک مقبول رہنما کی جون میں گرفتاری کے بعد احتجاج ہوا تھا۔ لیڈر کو اکتوبر میں جیل کی سزا ہو گئی۔
اس گاؤں نے 2011 میں بین الاقوامی برادری کی توجہ اپنی طرف متوجہ کی تھی۔13ہزار نفوس پر مشتمل آبادی والا یہگاوں پانگ کانگ کے قریب واقع ہے ۔جہاں بڑے پراجکٹوںکی تعمیر کے لیے 2011میں کاشتکاروں کی زمین اپنی تحویل میں لینے کے معاملہ پر حکمراں کمیونسٹ پارٹی کے خلاف احتجاج میں مظاہرین کی جیت ہوئی تھی۔
گاؤں کے عالمی توجہ کا مرکز بن جانے کے پیش نظر پارٹی نے گاؤں والوںکو مقامی پارٹی سکریٹری منتخب کرنے کی اجازت دے دی تھی۔اس الیکشن میں ایک سابق احتجاجی لین ژولوان جیتا تھا۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: China sends 9 villagers to prison after land protests in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply