چلی کے صدر نے جنگلوں میں آتشزدگی پر قابو پانے کے لئے دیگر ممالک سے مدد کی اپیل

نیویارک:جنوبی امریکی ملک چلی کے جنگلات میں لگی دہائی کی سب سے زبردست آگ پر قابو پانے کے لئے فوج کے 1200 جوان اور 500 فائربریگیڈ اہلکاروں کی خدمات حاصل کی گئی ہیں۔ صدر مشیل بیشلیٹ نے کہا کہ انہوں نے جنگلوں میں لگی آگ پر قابو پانے میں مہارت رکھنے والے ممالک سے مدد کی اپیل کی ہے۔
انہوں نے کہا، ”فائربریگیڈ کا عملہ اس پر قابو پانے کی ہر ممکن کوشش کر رہا ہے وہ اس میں پوری تندہی سے لگے ہوئے ہیں“۔ انہوں نے کہا کہ چلی کے دورے پر آئے فرانسیسی صدر فرانسواں اولاند سے بھی مدد کی اپیل کی گئی ہے۔ دارالحکومت سینٹیاگو کے جنوبی علاقے میں ایمرجنسی کا اعلان کر دیا گیا ہے۔
ان جنگلوں میں ایک ہفتہ قبل ہی آگ لگی تھی اور جنگل کے خشک ہونے کی وجہ سے یہ پورے حصے میں پھیل گئی۔ اس وقت بیشتر جنوبی امریکی ممالک میں موسم گرم ہے۔ حکام نے امریکہ، کینیڈا، میکسیکو اور پڑوسی متحدہ ارجنٹینا، برازیل، اروگوے اور پیرو سے بھی ہوائی جہاز اور ہیلی کاپٹروں کا مطالبہ کیا ہے۔ چلی کے وسطی اور جنوبی حصے کی 100 سے زائدمقامات پر لگی آگ پر قابونہیں پایا جا سکا ہے۔ کم از کم 100 سے زائد لوگوں نے اپنے گھروں کو خالی کر دیا ہے اوردوسری جگہ پناہ لے لی ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Chile forest fires troops join fight against worst fires in decades in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply