دفعہ 370کی تنسیخ کے ہندوستانی فیصلہ پر برطانوی ممبران پارلیمنٹ کا اظہار ناخوشی

لندن: ایک طرف جہاں یو کے حکومت نے یہ کہتے ہوئے کہ وہ کشمیر کی صورت حال پر نظر رکھے ہے ،سکون برقرارکھنے کی اپیل کی وہیں برطانیہ کے ممبران پارلیمنٹ نے دفعہ370اور جموں و کشمیر کے بٹوارے کے ہندوستانی فیصلہ پر ملا جلا ردعمل ظاہر کیا۔

غیر ملکی و دولت مشترکہ دفتر (ایف سی او) کے ترجمان نے اس موضوع پر جس پر برطانیہ کے اراکین پارلیماں نے ”سخت تشویش“ اور ”مکمل حمایت“ دونوں کا اظہار کیا کہا کہ ہم حالات کا قریب سے مطالعہ کر رہے ہیں اور صورت حال پر سکون رکھنے کی تلقین کر رہے ہیں۔

کشمیر کے امور پر تشکیل دیے گئے برطانیہ کے کل جماعتی پارلیمانی گروپ (اے پی پی جے)نے یو کے کے وزیر خارجہ ڈومینک راب کو لکھا کہ وہ حقوق انسانی کی تشویشات کو دیکھیں او ر معلوم کیا کہ کیا یو کے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ستمبر میں ہونے والے اجلاس میں اس معاملہ کو اٹھائے گا۔

حزب اختلاف لیبر پارٹی کی ممبر پارلیمنٹ اور اے پی پی جے کی سربراہ ڈیبی ابراہام نے ایف سی او و زیر کو ارسال کیے گئے اپنے مکتوب میں لکھا ہے کہ ہندوستانی وزیر داخلہ امیت شاہ کے اس اعلان سے کہ جموں و کشمیر کو خصوصی درجہ دینے والی دفعہ370منسوخ کی جارہی ہے، بہت زیادہ تشویش ہو گئی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ حکومت ہند کے اس یکطرفہ فیصلہ جموں و کشمیر کے عوام کے اعتماد کو مجروح کیا گیا ہے نیز اس سے خطہ میں کشیدگی اور زیادہ پھیلے گی۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: British mps raise voice over indias decision in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.