آنگ سوکی نے روہنگیائی مسلمانوں کی نسل کشی کی تردید کی

لندن: میانمار کے مسلم اکثیریتی علاقے رخائین میں ڈھائے جانے کی عالی سطح پر پھیلنے والی خبروں کے درمیان ملک کی رہنما آنگ سانگ سو کی نے ان الزامات کی تردید کی کہ ملک میں روہنگیائی مسلم اقلیت کی نسل کشی کی جا رہی ہے۔
تاہم نوبل انعام یافتہ آنگ سانگ سوچی نے بی بی سی کو ایک خصوصی انٹرویو میں اس بات کو ضرورتسلیم کیا کہ میانمار کی شمالی ریاست رخائین میں، جہاں روہنگیا ئی مسلمان آباد ہیں، حالات ناہیت تکلیف دہ ہیں۔لیکن انہوں نے یہ بھی کہا کہ ان حالات کو مدنظر رکھ کر نسلی صفائی جیسی اصطلاح استعمال کرنا نامناسب ہے ۔یہ بہت سخت اصطلاح ہے۔
انہوں نے یہ بھی کہا کہ ملک میں واپس آنے والے ہر روہنگیا ئی مسلم کا کھلے دل سے خیر مقدم کیا جائے گا۔ آنگ سانگ سوچی نے کہا کہ یہ صحیح ہے کہ وہاں بہت خون خرابہ ہو رہا ہے لیکن یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ وہاں مسلمان ہی آپس میں مار کاٹ کر رہے ہیں ۔
کیونکہ جس مسلمان پر بھی انہیں شک ہوجاتا ہے کہ وہ حکومت کے ساتھ تعاون کر رہا ہے اسے ہلاک کر دیا جاتا ہے۔اور ہم اسی آپسی پھوٹ اور تقسیم کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔انھوں نے اس بات کی بھی تردید کی میانمار کی فوج کو من مانی کرنے کی کھلی چھوٹ دی گئی تھی۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Aung san suu kyi no ethnic cleansing of myanmar muslim minority in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply