امداد نہ ملی تونائجیریا میں امسال50ہزار بچے لقمہ اجل بن سکتے ہیں: یونیسیف

لاگوس:شمالی مشرقی نائجیریا میں قحط اور بوکوحرام کی سات سال سے جاری لڑائی کی وجہ سے حالات اتنے خراب ہوچکے ہیں کہ تقریباً پانچ لاکھ بچے بھوکمری کا شکار ہیں۔ یہ اطلاع یونیسیف نے دی ہے۔ جن چار لاکھ 75 ہزار بچوں کے لئے خطر ہ ہے ان میں سے 49 ہزار بوکو حرام کے گڑھ بورنو ریاست کے ہیں اگر ان کا تغذیہ کی کمی سے ہونے والے امراض کا علاج نہ کیا گیا تو وہ اس سال مرجائیں گے۔ اقوام متحدہ کی بچوں کی ایجنسی نے اس بحران سے نمٹنے کے لئے 30.8 کروڑ ڈالر چندہ دینے کی اپیل کی ہے۔ تاہم اب تک یونیسیف کو محض 4.1 کروڑ ڈالر ہی مل سکے ہیں۔
یہ مطلوبہ رقم کا محض 13 فی صد ہے۔ چار ممالک چاڈ نائجیریا۔ نائجیریا اور کیمرون کے چاڈ جھیل کے اطراف واقع علاقوں کے حالات بے حد خراب ہیں ۔ 2015 کے آغاز میں بوکوحرام نے بہت بڑے علاقہ پر قبضہ کرلیا تھا مگر اس کے بعد چاروں ملکوں نے مل کر اس کے خلاف کارروائی کی اور پچھلے 18 ماہ کے دوران انہیں کافی پیچھے دھکیل دیا گیا ہے۔ اب ان کی بیشتر فورسز بورنو صوبہ کی راجدھانی میدوگری کے وسیع عریض سامبیسا جنگلات میں روپوش ہیں۔ یونیسیف کا کہنا ہے کہ نائجیریا کی حکومت علاقہ پر قبضہ کرنے کے بعد اب امدادی افسران وہاں جاکر تباہی کا اندازہ لگارہے ہیں کہ لوگ کس بحران سے گذر رہے ہیں۔
جنگجو تنظیم کے جانے کے بعد قصبات اور دیہات کھنڈر بن چکے ہیں اور لوگوں کو بنیادی ضروریات تک مہیا نہیں ہیں نہ انہیں پیٹ بھر کھانا ملتا ہے نہ بیمار پڑنے پر علاج کی سہولت ہے ان ناگفتہ بہ حاالات میں پرورش پارہے بچوں کی حالت کے بارے میں چونکا نے والے انکشاف کئے گئے ہیں۔بورنو میں دو تہائی ہسپتال اور کلینک جزوی یا مکمل طور پر تباہ ہوچکے ہیں ان کے علاوہ پانی کی سپلائی اور پانی کی نکاسی وغیرہ کی تین چوتھائی سہولیات کی مرمت درکار ہے۔
یونیسیف کا کہنا ہے کہ فوجی پیش قدمی کے باوجود 22 لاکھ افراد اب بھی بوکوحرام کے کنٹرول والے علاقوں میں پھنسے ہوئے ہیں یہ تنظیم جنوبی صحرا میں خلافت قائم کرنے کے لئے لڑرہی ہے۔ یہ پھنسے ہوئے لوگ کیمپوں میں مقیم ہیں اور اپنے گھروں کو لوٹنے سے خوفزدہ ہیں۔ بوکوحرام نے 2009 میں بغاوت شروع کی تھی جب سے اب تک وہ 15 ہزار لوگوں کو ہلاک کرچکا ہے۔
میدان جنگ میں اپنی پسپائی کے بعد بوکوحرام نے خودکش بمباروں سے حملے شروع کر دیے۔ ایسے کئی واقعات میں بچوں کا استعمال بھی کیا گیا۔ یونیسیف کا کہنا ہے کہ اس سال اب تک بچوں کے ذریعہ 38 خودکش حملے کرائے گئے ہیں جبکہ 2015 کے پورے سال میں ایسے 44 اور اس سے پچھلے سال محض 4 واقعات ہوئے تھے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: At leas 49000 hungry kids risk death in nigeria in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply