حلب میں جنگ بندی کی تجویز پر روس اورچین کے ویٹوکے بعد سرکاری فوج کی مزید پیش قدمی

نیویارک:شام کے حلب شہر میں سات دن کی جنگ بندی کی تجویز کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں کل روس اور چین کی جانب سے ویٹو کیے جانے کے بعدآج حکومت کی وفادار فوج باغیوں کے زیر تسلط علاقوں میں مزید اندر تک گھس گئی۔ تین ہفتے سے حلب کا محاصرہ کرنے کے دوران سرکاری فوج اور اتحادی انتہا پسندوں نے راتوں رات قاضی عسکر علاقہ پر قبضہ کر لیا اور اب مشرقی حلب میں باغیوں کے علاقہ کے تقریباً دو تہائی حصہ پر قابض ہے۔
واضح رہے کہ نیوزی لینڈ،مصر اور اسپین نے حلب میں سات دن کی جنگ بندی کی تجویز پیش کی تھی۔تجویز کے حق میں 11ملکوں نے ووٹ کیا جب کہ وینیزوئلانے اس کی خلاف ووٹ کیا۔ شام میں 2011میں خانہ جنگی شروع ہونے کے بعد سے روس نے شام کے معاملے میں سلامتی کونسل میں 11بار اپنے ویٹو کے حق کا استعمال کیا جبکہ چین نے پانچویں بار اس حق کا استعمال کیا۔روس کے سفیر نے یہ کہہ کر جنگ بندی کی تجویز کی مخالفت کی کہ اس سے حلب شہر کے مسلح باغیوں کو متحد ہونے کا موقع مل جائے گا اور وہ وہاں کے لوگوں کی زندگی کے لئے خطرہ پیدا کریں گے۔
امریکہ کے سفیر کا کہنا تھا کہ حلب کے مشرقی حصہ میں اب بھی دو لاکھ سے زیادہ لوگ پھنسے ہیں اورلڑائی جاری رہنے سے ان کی زندگی کےلئے خطرہ پیدا ہوگیا ہے۔امریکہ نے قبول کیا کہ مشرقی حلب کے آدھے حصہ پر شام کی فوج کا قبضہ ہو چکا ہے۔ روس کے سفیر نے حلب میں جنگ بندی کی مخالفت کی لیکن کہا کہ وہ شام کے معاملے میں امریکہ سے بات کرنے کو تیار ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Army advances in aleppo as russia blocks un truce plan in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News
Tags: ,

Leave a Reply