برطانیہ میں2016میں ساڑھے پانچ سو سے زائد یہودی مخالف وارداتیں ہوئیں

لندن:برطانیہ میں یہودیوں کے خلاف ہونے والے واقعات میں اس سال کے ابتدائی چھ ماہ میں 11 فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ ایک یہودی مشیر شاخ نے آج اس بات کی اطلاع دی۔
شاخ نے کہا کہ یہ اعداد و شمار ملک میں بڑھتی ہوئی عدم برداشت کی تشویش ناک صورت حال کی عکاس ہیں۔ 23 جون کو ہونے والے ریفرنڈم میں برطانیہ نے یورپی یونین کو چھوڑنے کے لئے ووٹ دیا تھا جس کے بعد پولیس نے ایک وارننگ جاری کرکے لوگوں کو محتاط رہنے کے لئے کہا تھا۔ برطانیہ میں تقریبا 2 لاکھ ساٹھ ہزار یہودی رہتے ہیں۔
برطانیہ میں رہنے والے یہودیوں کو تحفظ کے سلسلے میں مشورہ دینے والی کمیونٹی سیکورٹی ادارے سے حاصل اعداد و شمار کے مطابق اس سال جنوری سے جون تک 557 یہودی مخالف واقعات سامنے آئے ہیں۔ 1984 سے اعداد و شمار جمع کرنے والے ادارے کے مطابق یہ اب تک کی سب سے بڑی تعداد ہے۔ برطانیہ میں سوشل میڈیا کے ذریعے یہودیوں کے خلاف مہم چلائی جا رہی ہے۔
جس میں مشہور یہودی لوگوں اور سیاستدانوں کو بھی نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ لیبر پارٹی کی یہودی رکن پارلیمان لوسیانا برگر نے بھی آن لائن دھمکی ملنے کی بات قبول کی ہے۔
یہودی نظریے کے خلاف کل جماعتی پارلیمانی گروپ کے صدر جان مان نے کہا کہ یہودیوں کے خلاف جرائم کرنے والوں کو پکڑ کر ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔ مسٹر مان نے کہا کہ اس سلسلے میں لوگوں کو بیدار کرنے کی ضرورت ہے۔

Read all Latest world news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from world and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Anti semitic incidents rise by 11percent in 2016 in Urdu | In Category: دنیا World Urdu News

Leave a Reply