خواجہ احمد عباس اردو کی وہ باوقار شخصیت ہے جو کسی تعارف کی محتاج نہیں

نئی دہلی: خواجہ احمد عباس، جن کی آج (یک جون) کو 31واں یوم وفات ہے، اردو کی وہ باوقار شخصیت ہے جو کسی تعارف کی محتاج نہیں۔آپ بیک وقت صحافی ،افسانہ نگار ،ناول نگار ،فلم اسٹوری رائیٹر ،فلم ڈائیریکٹر ،فلم پرڈیوسر اور سیاسی لیڈر تھے۔خواجہ احمد عباس کی پیدائش 7 جون1914 پانی پت شہر میں ہوئی-
آپ نے افسانوں کے 11 مجموے ،3 ناول ،3 ڈرامے ،دو رپورتاڑ اور کم و بیش 62 فلموں میں بطور منظر نگار ،ہدایت کار ،اسکرپٹ رائیٹر یا فلمساز کے کام کیا۔ ان کا انگریزی میں سوانح “I am not an Island ” بھی شائع ہوا ہے.اس کے علاوہ اخبار “Aligarh Opinion” نکالا .اخبار” بلٹز“ کالم آزاد قلم انہوں نے چالیس سال تک لکھا جو کہ صحافت کے میدان میں سب سے طویل العمر کالم کی حیثیت رکھتا ہے۔ ان کا پہلا افسانوی مجموعہ “ایک لڑکی”اورپہلا افسانہ”ابابیل“و1937میں شائع ہوا۔
خواجہ احمد عباس کا پہلا ناول”انقلاب“1942میں شائع ہوا۔پہلی فلم “نیا سنسار”1941 اور آخری فلم “حنا “1991ءمیں اس وقت منظر عام پر آئی جب ان کا انتقال ہو چکا تھا۔اس فلم کی کہانی انہوں نے ترتیب دی تھی. آپ کا پہلا ڈرامہ ” جوبیدہ”ہے۔“مسافر کی ڈائیری“آپ کا پہلا شاہکار ہے جو 1924میں دہلی سے شائع ہو۔ آپ کا انتقال یکم جون 1987کوممبئی میں ہوا۔
خواجہ احمد عباس کا افسانہ کھدر کا کفن ملاحظہ فرمائیں:

کھدر کا کفن
تیس برس کی بات ہے جب میں بالکل بچّہ تھا۔ ہمارے پڑوس میں ایک غریب بوڑھی رہتی تھی۔ اس کا نام تو حکمین تھا مگر لوگ اسے حکّو کہہ کر پ±کارتے تھے۔اس وقت شاید ساٹھ بر س کی عمر ہوگی، جوانی میں ہی ودھوا ہوگئی تھی اور عمر بھر اپنے ہاتھ سے کام کر کے اپنے بچوں کو پالا تھا۔ بوڑھی ہو کر بھی وہ سورج نکلنے سے پہلے اٹھتی تھی۔ گرمی ہو یا جاڑا۔ ابھی ہم اپنے اپنے لحافوں میں دبکے پڑے ہوتے کہ اس کے گھر سے چکّی کی آواز آنی شروع ہو جاتی۔ دن بھر جھاڑو دیتی، چرخہ کاتتی، کپڑا بنتی، کھانا پکاتی، اپنے لڑکے لڑکیوں، پوتے نواسوں کے کپڑے دھوتی۔ اس کا گھر بہت ہی چھوٹا تھا۔ ہمارے اتنے بڑے آنگن والے گھر کے مقابلے میں وہ جوتے کے ڈبّے جیسا لگتا تھا۔ دو کوٹھریاں، ایک پتلا سا دالان اور نام کے واسطے دو تین گزلمبا چوڑا صحن مگر اتنا صاف ستھرا اور ایسا لِپا پ±تا رکھتی تھی کہ سارے محلے میں مشہور تھا کہ حکّو کے گھر کے فرش پر کھیلیں بکھیر کر کھاسکتے ہیں۔صبح سویرے سے لے کر رات گئے تک وہ کام کرتی تھی پھر بھی جب کبھی حکّو ہمارے گھر آتی ہم اسے ہشّاش ہی پاتے۔ بڑی ہنس مکھ تھی وہ۔ مجھے اس کی صورت اب تک یاد ہے۔

گہرا سانولا رنگ جس پر ا±س کے سفید بگلا سے بال خوب کھلتے تھے۔ اس کی کاٹھی بڑی مضبوط تھی۔ اس کی کمر مرتے دم تک نہیں جھکی۔ آخر دنوں میں کئی دانت ٹوٹ گئے تھے جس سے بولنے میں پوپلے پن کا اندازآنداز آگیا تھا۔ بڑے مزے کی باتیں کرتی تھی اور جب ہم بچّے اسے گھیر لیتے تو کبھی تین شہزادوں، کبھی سات شہزادوں، کبھی جِنوں اور پریوں کی کہانی سناتی………… وہ پردہ نہیں کرتی تھی۔ اپنا سارا کاروبار خود چلاتی تھی۔ حکّو پڑھی لکھی بالکل نہیں تھی، نہ ا±س نے عورتوں مردوں کی برابری کا اصول سنا تھا، نہ جمہوریت نہ اشتراکیت کا، پھر بھی حکّو نہ کسی مرد سے ڈرتی تھی نہ کسی امیر، رئیس، افسر اور داروغہ سے ڈرتی تھی۔حکّو نے عمر بھر محنت کر کے اپنے بال بچّوں کے لیے بہت پیسے جمع کیے تھے۔ بے چاری نے بینک کا تو نام نہ سنا تھا۔ اس کی ساری پونجی (جو شاید سو دو سو روپے ہو،) چاندی کے گہنوں کی شکل میں اس کے کانوں، گلے اور ہاتھوں میں پڑی ہوئی تھی۔ چاندی کی بالیوں سے ا±س کے جھکے ہوئے کان مجھے اب تک یاد ہیں۔ ان گہنوں کو وہ جان سے بھی زیادہ عزیز رکھتی تھی۔

کیوں کہ یہ ہی ا±س کے بڑھاپے کا سہارا تھے۔ مگر ایک دن سب محلے والوں نے دیکھا نہ حکّو کے کان میں بالیاں ہیں، نہ ا±س کے گلے میں ہنسلی، نہ ا±س کے ہاتھوں میں کڑے اور چوڑیاں پھر بھی ا±س کے چہرے پر وہی پرانی مسکراہٹ تھی اور کمر میں نام کو بھی خم نہیں۔ ہوا یہ کہ ان دنوں مہاتما گاندھی، علی برادران کے ساتھ پانی پت آئے۔ ہمارے نانا کے مکان میں انھوں نے تقریریں کیں۔ ترکِ موالات اور سوراج کے بارے میں حکو بھی ایک کونے میں بیٹھی ہوئی سنتی رہی۔ بعد میں چندہ جمع کیا تو اس نے اپنا سارا زیور اتار کر ان کی جھولی میں ڈال دیا اور اس کی دیکھا دیکھی اور عورتوں نے بھی اپنے اپنے زیور اتار کر چندے میں دے دیے۔اس دن سے حکّو ”خلافتی“ ہو گئی۔

ہمارے ہاں آکر نانا ابّا سے خبریں سنا کرتی اور اکثر پوچھتی…………. یہ انگریزوں کا راج کب ختم ہوگا؟“ خلافت یا کانگریس کے جلسے ہوتے تو ان میں بڑے چاو¿ سے جاتی اور اپنی سمجھ بوجھ کے مطابق سیاسی تحریک کو سمجھنے کی کوشش کرتی……… مگر عمر بھر کی محنت سے اس کا جسم کھوکھلا ہو چکا تھا۔ پہلے آنکھوں نے جواب دیا، پھر ہاتھ پاو¿ں نے حکّو نے گھر سے نکلنا بند کر دیا مگر چرخہ کاتنا نہ چھوڑا۔ عمر بھر کی مشق کے سہارے آنکھوں بغیر بھی کپڑا ب±ن لیتی۔ بیٹوں، پوتوں نے منع کیا تو اس نے کہا کہ وہ یہ کھدّر اپنے کفن کے لیے ب±ن رہی ہے۔پھر حکّو مرگئی۔ اس کی آخری وصیت یہ تھی کہ ”مجھے میرے بنے ہوئے کھدر کا کفن دینا۔ اگر نگریزی کپڑے کا دیا تو میری روح کو کبھی چین نصیب نہ ہوگا۔“ ان دنوں کفن لٹھّے کے دیے جاتے تھے کھدّر کا پہلا کفن حکو کو ہی ملا۔ اس کا جنازہ اٹھا تو اس کے چند رشتے دار اور دوتین پڑوسی تھے۔ نہ جلوس نہ پھول نہ جھنڈے بس ایک کھدّر کا کفن۔

Read all Latest stories news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from stories and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Khwaja ahmad abbas in Urdu | In Category: افسانے و کہانیاں Stories Urdu News

Leave a Reply