دھونی کو ذلت آمیز طو پر قیادت سے ہٹانے پر اظہر الدین نے پنے پر کڑی تنقید کی

نئی دہلی: سابق ہندوستانی کپتان محمد اظہر الدین نے انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) میں رائزنگ پنے سپرجائنٹس سے مہندر سنگھ دھونی کو کپتانی سے ہٹانے کے طریقے کے سلسلے میں ٹیم پر سخت الفاظ میں تنقیدکی۔ آئی پی ایل کے اس سال 10 ویں ایڈیشن سے پہلے ہی پنے نے دھونی کو اتوار کے روز اپنی ٹیم کی کپتانی سے ہٹا دیا تھا۔ تاہم ٹیم انتظامیہ نے کہا تھا کہ یہ فیصلہ دھونی سے صلاح مشورے کے بعد لیا گیا ہے۔ دھونی کے کپتانی سے استعفی بعد آسٹریلیائی کپتان اسٹیون اسمتھ کو ٹیم کا کپتان بنایا گیا۔
اظہر الدین نے میڈیا سے کہا”جس طریقے سے یہ فیصلہ کیا گیا وہ تیسرے درجے کا اور ذلت آمیز تھا۔ دھونی ہندوستانی کرکٹ کا ہیرا ہیں۔ انہوں نے اپنی کپتانی میں گزشتہ آٹھ نو سالوں میں ہر ٹونارمنٹ جیتا ہے۔ یہاں تک کہ فرنچائزی یہ کہہ سکتی ہیں کہ وہ اپنے پیسوں سے ٹیم چلا رہے ہیں، کیا انہیں دھونی کو کپتانی سے ہٹانے سے پہلے ان کا قد اور رتبہ نہیں دیکھنا چاہئے تھا۔ سابق کرکٹر ہونے کی وجہ سے مجھے اس بات پر غصہ آیا اور فیصلہ مایوس کن ہے“۔ پنے کی ٹیم نے گذشتہ سال آئی پی ایل ٹورنامنٹ میں قدم رکھا تھا لیکن ٹیم کی کارکردگی مایوس کن رہی تھی اور ٹیم نے 14 میچوں میں سے صرف پانچ میں جیت حاصل کی تھی۔
سابق کپتان کا کہنا ہے کہ اس کا سارا الزام دھونی پر نہیں ڈالنا چاہیے۔ سابق کپتان نے کہا ”جب ٹیم اچھی کارکردگی نہیں کرتی ہے تو اس میں کپتان کیا کرے گا۔ اگر دھونی بہترین اور متاثر کن کپتان نہیں ہوتے تو کیا وہ دو آئی پی ایل خطاب جیت پاتے۔دھونی اس سے پہلے اپنی کپتانی میں آئی پی ایل کی چنئی سپر کنگ کو دو بار خطاب دلا چکے ہیں۔ اس ٹیم پر آئی پی ایل میں بدعنوانی کے الزامات کے بعد دو سال کے لئے پابندی لگی ہوئی ہے۔ اس کے علاوہ راجستھان رائلس پر بھی دو سال کی پابندی ہے۔

Title: punes sacking of ms dhoni was third rate and disgraceful azharuddin | In Category: کھیل  ( sports )

Leave a Reply