ہندوستان نے آخری ٹیسٹ میں آسٹریلیا کو ہرا کر سیزن کی چوتھی سریز جیتی

دھرم شالہ: افتتاحی بلے باز لوکیش راہل نے سریز کی چھٹی ہاف سنچری اور کپتان اجنکیا رہانے کے ساتھ تیسرے وکٹ کے لیے 60رنز کی پارٹنر شپ کی مدد سے ہندوستان نے آسٹریلیا کو 8وکٹ سے ہرا کر سریز 2-1سے جیت کر بارڈر گواسکر ٹرافی پر قبضہ کر لیا۔ اس جیت کے ساتھ ہی ہندوستان نے اس سیزن میں لگاتار چوتھی سریز جیت کر عالمی درجہ بندی میں اپنی اول پوزیشن کا اتنا مضبوط کر لیا کہ اس کے تعاقب میں لگی جنوبی افریقہ اور آسٹریلیا سمیت تمام ٹیسٹ ٹیموں کو اس کو اس پوزیشن سے بے دخل کرنے کے لیے لوہے کے چنے چبانے پڑیں گے۔ ہندوستان نے منگل کی صبح بغیر کسی نقصان کے 19رنز کی اپنی پیر کی ناتمام اننگز کا آغاز کیا ۔
لیکن ابھی اسکور 46ہی ہوا تھا کہ دن کے 8ویں اوور کی پہلی گیند پر فاسڑٹ بولر کمنزنے مرلی وجے کو آف اسٹمپ سے باہر چکمہ دیا اور گیند ان کے بلے کا باہری کنارہ چھوتے ہوئے کیچ کی شکل میں وکٹ کیپر میتھیو ویڈ کے ہاتھوں میں جاکر چھپ گئی۔اسی اوور کی آخری گیند پر ہاں،نہ،ہاں،نہ کی تکرار میں سریز وننگ بلے باز چتیشور پجارا پوائنٹ سے میکسویل کے ڈائرکٹ تھرو کو ناکام نہ بنا سکے اور ان کے کریز مین واپس پہنچنے سے پہلے ہی گیند نے ان کی مڈل اسٹمپ اکھاڑ دی۔
لیکن آسٹریلیائی بولروں کی یہ آخری کامیابی تھی کیونکہ اس کے بعد 2آرز( راہل اور رہانے) نے دھیرے دھیرے منزل تک پہنچنا جاری رکھا اور جب کمنز نے شارٹ پچ بالوں سے رہانے کو ہراساں کرنے کی کوشش کی تو رہانے نے کمنز کے 8ویں اوور کی گیندوں کو ہوا میں ہی مڈ وکٹ اور کور باؤنڈریوں کی سیر پر بھیج کر ارادے ظاہر کر دیے کہ اب وہ لنچ سے پہلے ہی اس میچ کو ختم کردینا چاہتے ہیں۔لوکیش راہل 76گیندوں پر 9چوکوں کی مدد سے51اور رہانے 27گیندوں پر چار چوکوں اور دو چھکوں کے ساتھ38رنز بنا کر غیر مفتوح رہے۔تاکہ تقسیم انعامات و اعزازات کی تقریب ہوتے ہی ٹیم کے تمام کھلاڑی ڈریسنگ روم کے بجائے ہوٹل جا کر لنچ لے سکیں۔رویندر جڈیجہ کو ان کی آل رانڈ کارکردگی کے باعث مین آف دی میچ اور مین آف دی سریز قرار دیا گیا۔

Read all Latest sports news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from sports and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: India sweep season with fourth series win in Urdu | In Category: کھیل Sports Urdu News
Tags: , , ,

Leave a Reply