عالمی درجہ بندی میں اول دوئم پوزیشن پر فائز ہند آسٹریلیا ٹسٹ سریز کا آغاز جمعرات سے

پونے: کامیابی کے گھوڑے پر سوار کپتان وراٹ کوہلی کی ہندوستانی ٹیم جمعرات سے آسٹریلیا کے خلاف سیریز کا پہلا میچ کھیلنے اترے گی تو اس کی نظریں مہمان ٹیم کو شکست دے کر فاتحانہ آغاز کے ساتھ ساتھ ’سلور جوبلی‘ منانے پر بھی ہوگی۔ ہندوستان اور آسٹریلیا کے مابین چار ٹیسٹ میچوں کی بارڈر-گواسکر ٹرافی کا پہلا میچ کل سے یہاں کھیلا جائے گا۔ دنیا کی نمبر ایک ٹیم ہندوستان اور نمبر 2 ٹیم آسٹریلیا کے درمیان 1947 سے اب تک 90 ٹیسٹ کھیلے جا چکے ہیں جن میں ہندوستان نے 24 میں جیت حاصل کی ہے، 40 میں شکست جبکہ ایک میچ ٹائی رہا ہے اور 25 ڈرا کھیلے ہیں۔ کپتان وراٹ اس سیریز کے پہلے ہی میچ جتانے کے ساتھ آسٹریلیا کے خلاف جیت کی سلور جوبلی پوری کر دیں گے۔ اس کے علاوہ اس سیریز کو دونوں ہی ٹیموں کے لئے بھی کافی چیلنجنگ تصور کیا جا رہا ہے۔ ہندوستان وراٹ کی قیادت میں 19 ٹسٹ میچوں میں ناقابل تسخیر رہاہے۔ تو وہیں ٹیسٹ رینکنگ میں دنیا کے نمبر ون بلے باز اسٹیون اسمتھ پر بھی خود کو بطور کپتان ثابت کرنے کا دباؤ رہے گا۔ اسمتھ نے بھی تسلیم کیا ہے کہ ہندوستانی سر زمین پر سیریز جیتنے پر یا تو آپ کو عظیم کھلاڑی کا درجہ ملتا ہے یا پھر تنقید کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ آسٹریلیائی ٹیم اس سیریز کی اہمیت کو سمجھتی ہے اور جیت سے آغاز کرنے کی ہرممکن کوشش گی۔ آسٹریلیائی ٹیم کو سال 2013 کے اپنے ہندوستان کے دورے میں4-0سے شکست ملی تھی۔ اور مہمان ٹیم ہر حال میں اس ہار کا بدلہ بھی لینے کی پوری کوشش کرے گی۔
ہندوستانی ٹیم کا ہر کھلاڑی اس کے نشانے پر ہے اورا سمتھ کہہ چکے ہیں کہ انہوں نے میزبان ٹیم کے ہر کھلاڑی کیلئے حکمت عملی بنائی ہے۔ تو وہیں ہندوستان بلے باز اجنکیا رہانے کا کہنا ہے کہ ان کی ٹیم نے بھی آسٹریلیا کے ہر کھلاڑی کے لئے منصوبہ بندی کر رکھی ہے۔ گذشتہ چار ٹیسٹ سیریز میں چار مرتبہ ڈبل سنچری بنانے والے وراٹ یقیناً حریف ٹیم کے اہداف میں سرفہرست ہیں اور آسٹریلیائی ٹیم بار بار کہہ رہی ہے کہ وراٹ کو روکنے کے لئے خاص حکمت عملی کی ضرورت ہو گی۔ وراٹ نے گزشتہ چار سال میں 13 سنچری بنائی ہے اور ساتھ ہی ان کی قیادت میں ہندوستان نے کوئی بھی سیریز گنوائی نہیں ہے۔ ہندوستان اپنی پوری صلاحیت کے ساتھ اپنی فاتحانہ مہم کو جاری رکھنے کی کوشش کرے گا ۔یہی وجہ ہےٹیم کی شاندار کارکردگی کے پیش نظر ٹیم مینجمنٹ نے بنگلہ دیش کے خلاف کھیلنے والی ٹیم میں کوئی تبدیلی نہیں کی ہے۔ہندوستانی ٹیم نے بنگلہ دیش کے خلاف واحد ٹسٹ میں 208 رن سے جیت درج کی تھی جس میں وراٹ نے 204 رن کی اننگز کے ساتھ اپنی مسلسل چوتھی سیریز میں ڈبل سنچری مکمل کی تھی۔ وہ ایسا کرنے والے دنیا کے پہلے کھلاڑی ہیں اور ایک مرتبہ پھر اسکوربورڈ پر رن بنانے کی ذمہ داری سب سے زیادہ ان ہی کے کندھوں پر رہے گی۔ وراٹ اپنے کیریئر میں زمبابوے اور پاکستان کے علاوہ سبھی ٹیسٹ ملکوں کے خلاف کھیل چکے ہیں اور سنچری بھی بنائی ہے۔ہندوستانی کپتان کے علاوہ مرلی وجے، چتیشور پجارا، اجنکیا رہانے، نچلی صف میں وکٹ کیپر اور گزشتہ میچ میں سنچری بنانے والے ردھمان ساہا، رویندر جڈیجہ اور روی چندرن اشون اہم ثابت ہوں گے۔ بنگلہ دیش کے خلاف پہلی اننگز میں چھٹے نمبر پر کھیلتے ہوئے ساہا نے ناٹ آؤٹ 106 رن کی اہم اننگز کھیلی تھی۔تاہم سلامی بلے باز لوکیش راہل خراب فارم سے نجات حاصل نہیں کرسکے ہیں اور آسٹریلیا کے خلاف انہیں ٹیم کا بھروسہ جیتنے کیلئے اس بار بہترکھیلنا ہوگا۔آسٹریلیا کو ہندوستان کے لئے چیلنجنگ ضرور تصور کیا جا رہا ہے لیکن موجودہ اعداد و شمار سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ ایک بار پھر میزبان ٹیم کا اپنے گھریلو میدان پر پلڑا بھاری رہنے والا ہے جو فی الحال ٹیسٹ کی نمبر ایک ٹیم ہے اور اس فارمیٹ میں سری لنکا، ویسٹ انڈیز، جنوبی افریقہ، نیوزی لینڈ، انگلینڈ اور بنگلہ دیش کو شکست دے چکی ہے۔
ہندوستانی ٹیم کے کپتان اور کوچ انل کمبلے شاید آسٹریلیا کے خلاف پونے میں بھی اسی آخری الیون کو موقع دے سکتے ہیں جسے بنگلہ دیش کے خلاف اتارا گیا تھا۔ تاہم ٹیم کے پاس ٹرپل سنچری بنا کر سرخیوں میں آئے کرون نائر اور آل راؤنڈر جینت یادو جیسے بہترین کھلاڑی ہیں۔ وہیں تیز گیند بازی میں امیش یادو، ایشانت شرما اور بھونیشور کمار سے ہندوستان کو کافی امیدیں رہیں گی۔ ٹیم کے پاس اسٹار اسپنر روی چندرن اشون اور رویندر جڈیجہ بھی موجود ہیں۔بنگلہ دیش کے خلاف واحد ٹیسٹ میں بھی دونوں اسپنروں نے 6-6 وکٹ لئے تھے تو اس سے پہلے انگلینڈ کے خلاف اشون نے پانچ ٹیسٹ میچوں کی سیریز میں 30.25 کی اوسط سے 28 وکٹ اور جڈیجہ نے 25.84 کی اوسط سے 26 وکٹ حاصل کئے تھے اور اس جوڑی نے انگلش ٹیم کو سب سے زیادہ نقصان پہنچایا تھا۔ وراٹ نے مسلسل یہ کہا ہے کہ میچ جیتنے میں سب سے زیادہ گیند بازوں کی اہمیت ہوتی ہے اور امید ہے کہ ٹیم اس بار بھی تمام 20 وکٹ حاصل کرنے کیلئے اترے گی۔ ویسے بھی ہندوستانی پچوں اسپن کھیلنا ہمیشہ ہی آسٹریلیا کے لیے چیلنجنگ رہا ہے اور مہمان اس کیلئے سب سے زیادہ محنت کر رہی ہے۔ تاہم یہ توجہ دینا بھی ضروری ہے کہ اس ٹیم میں نمبر ایک ٹیسٹ بلے باز اسمتھ موجود ہیں جبکہ دوسرے نمبر پر سب سے زیادہ رن بنانے والے ڈیوڈ وارنر بھی اسی ٹیم کا حصہ ہیں۔ ہندوستان اے کے خلاف پریکٹس میچ میں اسمتھ، شان مارش، مشل مارش، پیٹر اینڈسکوب، میتھیو ویڈ نے تسلی بخش اسکور بنایا تھا۔ وہیں عثمان خواجہ اور میٹ رینشا بھی اہم اسکورر رہیں گے۔ اگرچہ اہم مقابلے میں ان کھلاڑیوں سے اور بھی بہتر کھیلنے کی امید رہے گی۔ آئی پی ایل کے 10 ویں ایڈیشن میں مہندر سنگھ دھونی کی جگہ پونے سپرجائنٹس کے کپتان بنائے گئے اسمتھ پر ہندوستانی شائقین پر بھی اپنی بلے بازی کا اثر چھوڑنے کے ساتھ ساتھ ہندوستانی اسپنروں کا بہتر طریقے سے سامنا کرنے کا دباؤ رہے گا۔ ہندوستان کے اپنے آخری دورے میں آسٹریلیا کے لیے 15 وکٹ حاصل کرنے والے ناتھن لیون مہمان ٹیم کے اہم آف اسپنر رہیں گے جو فی الحال ہندوستانی حالات میں اشون کی گیند بازی کی پریکٹس کر رہے ہیں۔ لیون نے پریکٹس میچ میں چار وکٹ لئے تھے۔ اس کے علاوہ اسٹیو او کیفے،جیسن برڈ اور مشل مارش بھی اہم گیندباز کے طور پر موجود رہیں گے۔ساتھ ہی کھلاڑیوں کے لئے اچھی خبر یہ ہے کہ پچ کے کیوریٹر پانڈورانگ سلگاونکر کے مطابق پچ پر کافی اچھال رہے گی اور گیند بازوں پر ہی ان حالات کا فائدہ اٹھانے کا دارومدار رہے گا۔

Read all Latest sports news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from sports and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: India aust test series from thursday in Urdu | In Category: کھیل Sports Urdu News

Leave a Reply