امریکہ پرموقع محل دیکھ کر پالا بدلنے کا پاکستان کا الزام

اسلام آباد: (یو این آئی) پاکستان کے وزیر اعظم کے مشیر برائے خارجہ امور سرتاج عزیز نے امریکی وزیر خارجہ جان کیری کے ہندوستان میں دہشت گردی سے متعلق دئے گئے بیانات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کے معاملے میں امریکہ وقت دیکھ کر پالا بدلتا ہے او ر وہ وہاں ہوں گے تو کچھ بیان دیں گے اور جب یہاں ہوں گے تو کچھ اور بیان دیں گے۔
سرتاج عزیز نے بی بی سی اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مسٹر کیری کے بیانات سے پاکستان کی کوئی بدنامی نہیں ہوئی ہے کیوں کہ امریکہ سمیت پوری دنیا کو یہ بات معلوم ہے کہ پچھلے تین برسوں میں پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف ساری لڑائیاں لڑی ہیں۔
انہوں نے پڑوسی ملک ہندوستان پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان کبھی نہیں چاہتا کہ پاکستان کو دہشت گردی ختم کرنے کا سہرا ملے۔ انھوں نے کہا کہ جماعت الدعوہ کے بارے میں اقوام متحدہ کی قراردادوں کو نافذ کیا جا رہا ہے۔ ’لوگ ایسے ہی باتیں کرتے ہیں۔ حافظ سعید،ذکی الرحمن لکھوی پر پابندیاں ہیں، ان کے اکاؤنٹ اور فنڈ اکھٹے کرنے پر پابندیاں ہیں۔
‘جماعت الدعوہ کے رہنماؤں کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہا کہ پاکستان امن کے لیے جماعت الدعو ہ جیسی تنظیموں کے خلاف ’آہستہ آہستہ‘ کارروائی کر رہا ہے۔ سرتاج عزیز کے مطابق پاکستان نے آپریشن ضرب عضب اور نیشنل ایکشن پلان میں حقانی نیٹ ورک سمیت تمام گروپوں کے خلاف بلا تفریق کارروائی کی ہے۔ ہندامریکہ تعلقات کے بارے میں پوچھے جانے پر سرتاج نے کہا کہ امریکی پالیسی کا مقصد چین کے بڑھتے ہوئے اثرات کو روکنا ہے اور ہندوستان اس میں زیادہ فٹ ہوتا ہے۔
ہندوستان اور امریکہ میں تعاو ن بڑھ رہا ہے ، دفاعی سمجھوتے ہوئے ہیں بلکہ ایک طرح کا اسٹریٹیجک پارٹنرشپ بن رہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ دوسری جانب چین، روس اور دوسرے علاقائی ممالک نے شنگھائی اتحاد بنایا ہے اور پاکستان بھی علاقائی صورت حال کو مدنظر رکھتے ہوئے ان ممالک سے تعلقات کو بہتر بنانے کی پالیسی کے ساتھ ساتھ امریکہ سے بھی اپنے تعلقات کو برقرار رکھنا چاہتا ہے کیونکہ پاکستان تو 40 برسوں سے امریکہ کا اتحادی رہا ہے۔
پاکستانی رہنما نے کہا کہ دنیا میں جس طرح کی نئی صف بندیاں ہو رہی ہیں پاکستان اس میں صحیح مقام پر کھڑا ہے۔انہوں نے اس بات کو مسترد کردیا کہ پاکستان دنیا میں الگ تھلگ پڑ رہاہے۔ انھوں نے کہا کہ یہ صرف پراپیگنڈہ ہے جو ہو رہا ہے اور ’پاکستان کے چین، روس اور مشرق وسطیٰ کے ممالک سے اچھے تعلقات ہیں۔‘ کشمیر کے متعلق سرتاج عزیز سے کہا کہ کشمیر کا مسئلہ دنیا کو نہیں بلکہ کشمیریوں کو حل کرنا ہے۔ ’جو لوگ ایک دفعہ خون دینے کے لیے تیار ہو جائیں ان کو کوئی نہیں دبا سکتا۔
‘ سرتاج عزیز نے کہا کہ پاکستان کو اس بات پر مایوسی ضرور ہوئی ہے کہ امریکہ سمیت دنیا نے کشمیر میں ہونے والی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی مذمت کرنے کی بجائے اس پر صرف تشویش کا اظہار کیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ساری دنیا میں دہشت گردی کا وبال بڑھ رہا ہے سوائے پاکستان کے۔’پاکستان نے نہ صرف اپنے قبائلی علاقوں کو دہشت گردوں سے صاف کر کے وہاں اپنی عملداری قائم کی، دولتِ اسلامیہ کو ابھی تک ملک میں داخل نہیں ہونے دیا اور فاٹا اصلاحات کے ذریعے اپنی سرحدوں کو مزید مضبوط کر رہے ہیں۔
‘ انھوں نے کہا جب سے افغانستان سے بیرونی افواج کی کمی ہوئی ہے اور مشرق وسطیٰ جنگ و جدل کا میدان بن رہا ہے تو امریکہ بھی اپنی پالیسی تبدیل کر رہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس صورت حال میں امریکہ نے ایشیا کو اپنی پالیسی کا محور بنایا ہے۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Us statements change with time pakistan in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply