الیکشن کمیشن آف پاکستان کو کس قانون کے تحت بھرتیوں پابندی لگانے کا اختیار حاصل ہے:سپریم کورٹ

اسلام آباد: چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے معلوم کیا کہ الیکشن کمیشن کو کس نے اختیار دیا کہ وہ سرکاری اداروں میں بھرتیوں پر پابندی لگائے۔ حکومتی اداروں میں بھرتیوں پر الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانبسے عارضی پابندی عائد کیے جانے پر از خود نوٹس لیتے ہوئے معاملہ کی سماعت کرتے ہوئے چیف جسٹس نے معلوم کیا کہ آخر کس قانون کے تحت الیکشن کمیشن آف پاکستان کو بھرتیوں پر پابندی لگانے کا اختیار حاصل ہے۔چیف جسٹس کی سربراہی میں ایک تین ججی بنچ ،جس کے دو دیگر ججز جسٹس عمر عطا بنڈیال اور جسٹس اعجاز الاحسن ہیں، اس معاملہ کی سماعت کر رہی ہے۔نوٹس میں کہا گیا کہ وفاقی و صوبائی پبلک سروس کمیشنوں میں بھرتیوں پر کوئی پابندی نہیں ہوگی۔علاوہ ازیں تمام ترقیاتی اسکیموں پر ،جو یک اپریل کے بعد سے شروع ہوئی ہیں،عمل آوری روک دی گئی ہے۔ ان ترقیات اسکیموں میں گیس و آبی سپلائی ، سڑکوں کی تعمیرات اور ان کی تزئین کاری شامل ہے۔ یہ اقدامات اس لیے کیے گئے تاکہ زیر تعمیر ترقیاتی پراجکٹوں کے لیے مختص فنڈ کا دیگر اسکیموں کی عمل آوری پر خرچ نہ کیا جا سکے۔واضح ہو کہ 2اپریل کو الیکشن کمیشن آف پاکستان نے سرکاری انتخابات سے پہلے حکومتی عہدیداروں کو اپنی مقبولیت بڑھانے کے لیے حکومتی فنڈ استعمال کرنے سے روک دیا تھا۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Under which law was recruitment halted cjp asks ecp in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply