قندیل بلوچ قتل کیس میں مجرم قرار دیے گئے تینوں ملزموں نے خود کو بے قصور بتایا

ملتان: پاکستانی ماڈل ، ادکارہ اور حقوق نسواں کی علمبردار قندیل بلوچ کے قتل کیس میں ایک عدالت سے مجرم قرار دیے گئے تینوں ملزموں بشمول قندیل کے بھائی نے سوشل میڈیا کی مشہور شخصیت کے قتل میں ملوث ہونے کی تردید کی اور خود کو بے قصور بتایا۔ جب ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اور سیشن جج سعید احمد رضا نے ان تینوں ملزموں ، قندیل کے بھائی وسیم، اس کے عم زاد حق نواز اور ٹیکسی ڈرائیور عبد الباسط، کو مجرم قرار دیا تو ان تینوں نے قتل میں اپنا ہاتھ ہونے سے انکار کیا۔چوتھے ملزم ظفر حسین کھوسہ کو عدالت نے مفرور قرار دے دیا۔ ان تینوں ملزموں کو جیل سے لاکر عدالت مین پیش کیا گیا تھا۔
عدالت نے انہیں مجرم قرار دینے کے بعد گواہوں کو عدالت میں پیش ہونے کی ہدایت دیتے ہوئے مقدمہ کی آئندہ سماعت آٹھ دسمبر مقرر کر دی۔دریں اثنا لاہور ہائی کورٹ کی ملتان بنچ نے ایک ملزم عبد الباسط کو ضمانت پر رہا کر دیا۔واضح رہے کہ 16جولائی کو قندیل جن کا اصل نام فوزیہ عظیم ہے،ملتان میں اپنی رہائش گاہ میںپر اسرا رحالات میں مردہ پائی گئی تھیں۔قندیل کے والد نے الزام لگایا تھا کہ قندیل کے چھوٹے بھائی وسیم نے غیرت کے نام پر اس کو قتل کیا ہے۔وسیم نے جو موقع واردات سے فرار ہو گیا تھا، بعد میں خود کو گرفتاری کے لیے پیش کرنے کے بعد ایک پریس کانفرنس میں اعتراف کیا تھا کہ اسی نے قندیل کو قتل کیا ہے۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Three accused in qandeel case plead not guilty in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply