قندیل بلوچ قتل کی ایف آئی آر ناقابل راضی نامہ میں تبدیل، اب لواحقین قاتلوں کو معاف نہیں کر سکتے

لاہور: سوشل میڈیا میں چھائی رہنے والی شخصیت قندیل بلوچ کے نامزد قاتلوں کے خلاف درج ابتدائی اطلاعاتی رپورٹ(ایف آئی آر) اب ناقابل راضی نامہ ایف آئی آر میں تبدیل ہو گئی جس کے بعد قندیل کے کنبہ والوں کو قاتلوں کو معاف کرنا ناممکن ہو گیا ہے ۔

*:ماڈل کے ساتھ سیلفی لینے والے مفتی عبد القوی رویت ہلال کمیٹی کی رکنیت سے برطرف
معاملہ کی تحقیقات کرنے والے ایک پولس افسر نے ڈان کو بتایا کہ مجموعہ تعزیرات پاکستان کی دفعات311اور305 ایف آئی آر میں شامل کر لی گئی ہیں۔وکیل شاکر کھوسہ نے ڈان سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ان دفعات کا اضافہ ایک خوش آئند اقدام ہے۔اور اب کوئی معاہدہ نہیں کیاجا سکتا ۔
جب کارو کاری قانونی تھی تو اسے ختم کرنے کے لیے یہ دفعات شامل کی گئی تھیں۔ اب چونکہ یہ دفعات ایف آئی آر میں شامل ہو چکی ہیں ا س لیے قاتلوں کو معافی دی ہی نہیں جا سکتی کیونکہ اب ریاست شکایت کنندہ ہو گئی ہے۔اور ورثاءاور قاتل کے درمیان کوئی مصالحت ، معافی یا معاہدہ نہیں ہو سکتا۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: State becomes complainant in qandeels murder bars family from pardoning killers in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply