راحیل شریف 41اسلامی ممالک کے فوجی اتحاد کی قیادت سے مستعفی ہورہے ہیں؟

لاہور:41اسلامی ممالک کے فوجی اتحاد میں امریکی مداخلت کے خلاف احتجاج میں پاکستان کے سابق فوجی سربراہ ریٹائرڈ جنرل راحیل شریف سعودی قیادت والے اتحاد کی کمان چھوڑ کر پاکستان واپس آنے پر غورکر رہے ہیں۔ایک پرائیویٹ ٹی وی چینل نیو ٹی وی نے دعویٰ کیا ہے کہ جنرل (ر) راحیل شریف کو اس بات کا شدت سے احساس ہو گیا ہے کہ سعودی رہنماوں نے انہیں اس اتحاد کے اغراض و مقاصد بتانے میں غلط بیانی سے کام لیا ہے، اور مختلف ذرائع بتا رہے ہیں کہ شاید راحیل شریف اس اتحاد کی سربراہی سے استعفی دے دیں گے۔
سعدی عرب میں حال ہی میں جو امریکہ۔عرب۔ اسلامی سربراہ اجلاس ہوا تو اس میں جنرل راحیل شریف ہی توجہ کا مرکز رہے۔جنرل راحیل نے اس کانفرنس میں شرکت کی جس میں کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ سمیت تمام مقررین نے دہشت گردی اور انتہا پسندی پر اظہار خیال کیا تھا۔ اخبار کے مطابق راحیل شریف خیال کر رہے تھے کہ یہ اتحاد واقعتاً دہشت گردی کے خلاف بنایا گیا ہے لیکن اب وہ اس کی حقیقت کی طرف متوجہ ہوگئے ہیں کہ یہ اتحاد فقط سعودی حکمرانوں کے ذاتی مفادات کے تحفظ کے لیے ہی بنایا گیا ہے۔
اخباری رپورٹ کے مطابق راحیل شریف کے قریبی دوستوں نے انہیں تلقین کی ہے کہ وہ جلد از جلد اس اتحاد کی سربراہی سے استعفیٰ دے کر واپس پاکستان آجائیں۔واضح رہے کہ اس سے پہلے پاکستان کی بیشتر سیاسی جماعتوں نے پاکستان کی اس اتحاد میں شمولیت کی مخالفت کی تھی اور پارلیمنٹ میں ایک قرارداد منظور کی گئی تھی جسکے مطابق حکومت کو سعودی عرب اور ایران کے درمیان ثالثی کا کردار ادا کرنے پر زور دیا گیا تھا۔

Title: raheel sharif thinking about leaving imaft | In Category: پاکستان  ( pakistan )

Leave a Reply