اسلامی اتحاد کی کمان سنبھالنے کے لیے جنرل راحیل نے وفاقی کابینہ سے این او سی نہیں لیا تھا:اٹارنی جنرل

اسلام آباد: سپریم کورٹ کو منگل کے روز اٹارنی جنرل نے مطلع کیا کہ سابق فوجی سربراہ جنرل راحیل شریف نے 41ملکی اسلامی فوجی اتحاد کا سپہ سالار بن کر سعودی عرب روانہ ونے سے پہلے وفاقی کابینہ سے عدم اعتراض سرٹی فیکٹ(این او سی) نہیں لیا تھا۔

حکومت ملازمین اور ججوں کی دوہری شہریت کے حوالے سے از خود نوٹس لینے والے کیس کی سماعت کے دوران اٹارنی جنرل خالد جاوید خان نے کہا کہ قانون کی رو سے غیر ملکی سرزمین کی فوج میں شمولیت کے خواہشمندوں کو وفاقی حکومت یا سرکاری افسران این او سی جاری کرتے ہیں۔

انہوں نے عدالت عظمیٰ کو مزید مطلع کیا کہ حکومتی ملازمت کے قواعد و ضوابط کی رو سے ایسی خدمات کے لیے وفاقی کابینہ سے منظور شدہ این او سی کی ضرورت ہوتی ہے۔

اٹارنی جنرل کو دفاع سکریٹری ریٹائرڈ جنرل ضمیر الحسن کے ذریعہ عدالت کو مطلع کرنے کے بعد کہ مملکت سعودی عرب میں اسلامی فوجی انسداد دہشت گردی اتحاد کے سپہ سالار کا عہدہ قبول کرنے لیے جنرل ہیڈ کوارٹر سے اجازت ملنے کے بعد وزارت دفاع نے سابق فوجی سربراہ کو این او سی جاری کیا تھا، یہ قانونی نقطہ نظر پیش کرنا پڑا ۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Raheel sharif did not obtain noc from cabinet for heading saudi military alliance sc told in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News
What do you think? Write Your Comment