حزب اختلاف صدر کے عہدے کے لیے مشترکہ امیدوار لانے میں ناکام

اسلام آباد: 25جولائی کے عام انتخابات کے بعد جو حزب اختلاف کا جو عظیم اتحاد ہوا تھا محض ایک ماہ کے اندراس کا شیرازہ اس وقت بکھر گیا جب اتحادی پارٹیاں صدارتی انتخابات کے لیے مشترکہ امیدوار لانے پر متفق نہ ہو سکیں اور4ستمبر کو ہونے والے صدارتی انتخاب میں حکمراں اتحاد کے خلاف ایک کے بجائے دو امیدوار پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی)کے چودھری اعتزاز احسن اور جمیعت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل ا لرحمٰن عرف مولانا ڈیزل میدان میں اتر گئے۔

اب صورت حال یہ ہے کہ مولانا فضل کو ، جنہوں نے پی پی پی اور پاکستان مسلم لیگ نوز(پی ایم ایل این) کے درمیان مصالحت کرانے کے لیے ثالثی کی تھی ،حزب اختلاف کی تمام سیاسی پارٹیوں بشمول پی ایم ایل این کی حمایت حاصل ہے جبکہ پی پی پی تنہا پڑ گئی۔

گذشتہ ماہ کے عام انتخابات میں دونوں حلقوں سے چناو¿ ہارنے والے مولانا فضل کو متحدہ مجلس عمل اور پی ایم ایل این یکے علاوہ عوامی نیشنل پارٹی، پختون خوا ملی عوامی پارٹی اور نیشنل پارٹی کی بھی حمایت حاصل ہے۔

پی ایم ایل این کے عامر مقیم نے بھی جمیعت علمائے اسلام کے لیے ڈمی امیدوار کے طور پر کاغذات نامزدگی داخل کر دیے۔ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) قیادت والے حکمراں اتحاد کے امیدوار ڈاکٹر عارف علوی نے بھی کاغذات نامزدگی داخل کرنے کے آخری دن سوموار کو اپنے دستاویزات داخل کر دیے۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Process of presidential election starts in pakistan in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply