چین سے تجارتی تعلقات بڑھا کر پاکستان نے اپنی تجارت اور برآمدات ٹھپ کر دیں: سنیٹر عتیق

اسلام آباد: چین کے ساتھ تجارتی پینگیں بڑھانے پر شدید ردعمل ظاہر کرتے ہوئے سینیٹر میاں عتیق شیخ نے سینیٹ میں پاک چین ترقیاتی منصوبوں کے خلاف تحریک التوا پیش کر دی۔ اپنی تحریک التواءمیں انہوں نے کہا کہ چین کے ساتھ تجارت کرنے اور ترقیاتی منصوبے بنانے سے پاکستان کی معیشت کو نقصان پہنچ رہا ہے۔
میاں عتیق نے کہا ہے کہ چین کے ساتھ تجارت صرف سیاسی جمع خرچ ہے۔ انہوں نے کہا کہ سب سے پہلا نقصان یہ ہے کہ ہماری بر آمدات ختم ہو کر رہ گئی ہیں۔ اسی ضمن میںبلوچستان نیشنل پارٹی کی سینیٹر کلثوم پروین نے کہا کہ گوادر کا منصوبہ کسی بھی صورت بلوچیوں کے فائدہ میں نہیں ہے کیونکہ وہاں سب چینی آکر بیٹھ گئے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ گوادر سے ابھی تک ملک میں کیا خوشحالی آئی ہے؟ حکومت اس کا جواب قوم کو دے۔ بلوچستان میں کوئی اقتصادی زون نہیں بنا، وہاں نہ کوئی کاروبار ہے نہ روزگار ہے۔
کلثوم پروین کا کہنا تھا کہ آج بھی بلوچی عوام سڑکوں پر روزگار کے لیے مارے مارے پھرتے ہیں۔ پیپلز پارٹی کے سینیٹر فرحت اللہ بابر نے کلثوم پروین کی حمایت میں کہا کہہم حکومت سے پوچھتے ہیں کہ گوادر پورٹ میں پاکستان اور چین کا کیا حصہ ہے؟ انہوں نے کہا: ہماری اطلاعات کے مطابق پاکستان کا 9 فی صد حصہ ہے جبکہ چین کا اس میں منافع 91 فی صد ہوگا۔

Title: pak china trade not good for pakistan people in Urdu | In Category: پاکستان  ( pakistan ) Urdu News
Tags: , ,

Leave a Reply