اڈیالہ جیل میں قید تین خطرناک دہشت گرد وں کی موجودگی سے نواز شریف کی جان کو خطرہ

راولپنڈی: اڈیالہ جیل میں قید سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کے خلاف کچھ قیدیوں کی نعرے بازی کے بعد جیل حکام نے مسٹر شریف کا جیل میں گھومنا پھرنا محدود کر دیا ہے۔

بدھ کی صبح جب وہ اپنی بیرک میں سے نکل کر چہل قدمی کر رہے تھے تو کئی قیدیوں نے ان پر پھبتیاں کسیں اورف ان کے خلاف نعرے لگائے۔ جس کے بعد جیل حکام نے احتیاطی تدابیر کے طور پر ان کو جیل کی مسجد میں بھی نماز پڑھنے سے بھی روک دیا۔

ذرائع کے مطابق اس واقعہ کے بعد جیل حکام نواز شریف اور مریم نواز کو سہالہ پولس کالج کے احطہ میں واقع سہالہ ریسٹ ہاؤس کے نام سے معروف سفوات لاج منتقل کرنے کا ارادہ کر رہے ہیں۔

اس امر کی یقینی بنانے کے لیے کہ اگر نواز شریف اور ان کی بیٹی مریم کو سہالہ ریسٹ ہاؤس منتقل کیا گیا تو وہاں ان کو ہلاک کرنے کے لیے کوئی دھماکہ خیز مواد یا بارودی سرنگ تو نہیں بچھائی گئی ہے بدھ کی شب باروودی سرنگ کا سراغ لگانے والی مشین کے ساتھ بم ناکارہ بنانے والے ایک اسکواڈ نے سہالہ پولس کالج کا دورہ کیا ۔

اڈیالہ جیل کے ایک سینیئر سیکورٹی اہلکار نے بتایا کہ باوجود اس کے کہ نواز شریف اور مریم کے لیے زبردست حفاظتی بندوبست کیا گیا ہے یہ جیل ،جہاں دہشت گردی کے معاملات میں مجرم قرار دیے گئے تین خطرناک قید بھی ہیں،نواز شریف کے لیے محفوظ نہیں ہو سکتی۔

سہالہ ریسٹ ہاؤس وہی لاج ہے جہاں1996میں پاکستان پیپلز پارٹی(پی پی پی) حکومت کی برطرفی کے بعد سابق صدر اور پی پی پی کے شریک چیرمین آصف علی زرداری کو بھی قید رکھا گیا تھا۔ماضی مٰن اور بھی کئی سیاسی لیڈران اس ریسٹ ہاؤس میں قید ی کے طور پر رکھے جا چکے ہیں۔

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Nawazs movement limited after inmates chant slogans against him in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News

Leave a Reply