نواز شریف کے وکیل کا عذر درست ثابت ہوا تو العزیزیہ ریفرنس کی سماعت کسی اور عدالت منتقل کی جا سکتی ہے

اسلام آباد: ایک احتساب عدالت نے پیر کے روز سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف اور ان کے بیٹو ں کے خلاف العزیزیہ کرپشن ریفرنس پر سماعت12جولائی تک موقوف کر دی۔

مدعا علیہ کے وکیل خواجہ حارث کی اس نشاندہی کے بعد کہ العزیزیہ ریفرنس میں شواہد کم و بیش ایسے ہی ہیں جیسے جمعہ کو احتسابی عدالت سے فیصل کیے گئے ایون فیلڈ ریفرنس میں پیش کیے گئے تھے،احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے سماعت ملتوی کر دی۔ حارث نے کہا کہ چونکہ کیس میں شواہد یکساں ہیں اسی لیے العزیزیہ کا فیصلہ اسی نوعیت کا ہوگا اس لیے جج کو اس ریفرنس کی سماعت سے انکار کر دینا چاہیے۔

جج بشیر نے معاملہ اسلام آباد ہائیکورٹ کو بھیجنے پر اتفاق کیا اوراگر ہائی کورٹ کوحارث کے دلائل میں وزن لگا اور درست پائے گئے تو کیس کسی اور احتساب عدالت کو منتقل کر دیا جائے گا۔اسلام آباد ہائی کورٹ کو اس قسم کے کیسوں کی منتقلی کرنے کا اختیار حاصل ہے۔

واضح ہو کہ لندن فلیٹس کے حوالے سے ایک مقدمہ میں جمعہ کو ہی عدالت نے نواز شریف ، بیٹی اور داماد کو بالترتیب10،7اور ایک سال قید کی سزا سنائی ۔داماد ریٹائرڈ کیپٹن صفدر کو تو قید بامشقت سنائی گئی ہے۔ نوازشریف پر8ملین اور مریم پو دو ملین پاو¿نڈ جرمانہ کی سزا بھی سنائی گئی ہے۔

Title: nawazs lawyer asks judge to recuse himself from al azizia reference in Urdu | In Category: پاکستان  ( pakistan ) Urdu News

Leave a Reply