پاکستان دہشت گردوں کی سرزمین، نواز شریف کا اعتراف،ہندوستانی موقف درست ثابت

 ممبئی میں26/11کو ہوئے دہشت گردانہ حملہ میں پاکستان کے رول پر سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کے بیان سے جہاں پاکستان کے سیاسی و فوجی حلقوں میں کھلبلی مچ گئی وہیںدوسری جانب ممبئی حملوں کے حوالے سے ہندوستان کے اس موقف کی بھی تائیدوتصدیق ہو گئی کہ یہ حملے پاکستان نے ہی کرائے تھے۔

اور پوری دنیا پر یہ بات روز روشن کی طرح عیاں ہو گئی کہ پاکستانی حکومت ، فوج اور آئی ایس آئی کے زیر سرپرستی پنپنے والے پاکستانی دہشت گردوں سے پوری دنیا اور خاص طور پر ہمیشہ ہی ہدف بنا رہنے والے ہندوستان کو کس قدر خطرہ ہے ۔اور اگر اس خطرے کا سدباب کرنے کے لیے اقدامات نہ کیے گئے اور بین الاقوامی برادری نے کوئیقدم نہ اٹھایا تو خطہ میں کیا پوری دنیا میں امن کی فضا مسموم ہو جائے گی۔مجموعی اعتبار سے دیکھا جائے تو نواز شریف کے اس بیان کی روشنی میں لشکر طیبہ کے سرغنہ و بین الاقوامی دہشت گرد قرار دیے جانے والے حافظ سعید کے حوالے سے ممبئی حملوں کا معاملہ پاکستان کے خلاف فوجداری مقدمہ کے طور پر عالمی عدالت کے عنوان سے پہچانے جانے والی بین الاقوامی عدالت انصاف(آئی سی جے) میں زیر سماعت لائے جانے کا متقاضی ہے۔

ہندوستان کے اس موقف پر کہ ممبئی حملوں کی سازش پاکستان میں رچی گئی تھی اور تاج ہوٹل اور اس کے آس پاس و کئی دیگر مقامات پر لشکر طیبہ کے دہشت گردوں کی رہنمائی پاکستان سے کی جارہی تھی یہ کہا گیا کہ یہ ہندوستان کا بے بنیاد الزام ہے۔ لیکن اب جب خود پاکستان کے ہی ایک سابق وزیر اعظم نے جسے وہاں کی سپریم کورٹ نے شدت پسند عناصر کے دباو¿ میں وزارت عظمیٰ ، کسی بھی قانون سازیہ کا رکن اور یہاں تک کہ اپنی ہی پارٹی کا سربراہ بننے کا نااہل قرار دے دیااس بات کا سر عام اقرار و اعتراف کر لیا کہ پاکستان میں دہشت گرد تنظیمیں سرگرم ہیں اور ممبئی حملوں میں پاکستانی دہشت گردوں کا ہی ہاتھ ہے اور یہ کہ پاکستان کب تک سرحد پار خونریزی کراتا رہے گا،ہندوستانی موقف کو صد فیصد درست ثابت کرتا ہے۔

دیکھا جائے تو یہ صرف ایک سابق وزیر اعظم کا ہی نہیں بلکہ پاکستان کا سرکاری طور پر اقبال گناہ و جرم ہے۔کیونکہ میاں محمد نواز شریف کو بھلے ہی سپریم کورٹ نے نااہل قرار دے دیا ہو وہ آج بھی وفاقی و حکومت پنجاب کی حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ کے سربراہ کی ہی حیثیت رکھتے ہیں اور آج بھی اصل وزیر اعظم وہی ہیں ۔کیونکہ موجودہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی ،وزیر داخلہ،خارجہ اور مالیات سمیت پارٹی کے تمام اہم رہنما جاتی امرا میں جمع ہو کر نواز شریف سے ہدایات لیتے ہیں۔

اور ایسے حالات میں نواز شریف کا یہ جراتمندانہ بیان ہندوستان کے موقف کی روشنی میں پاکستان کو عالمی عدالت کے کٹہرے میں کھڑا کرنے کو کافی ہے۔یہ کوئی معمولی یا سیاسی بیان نہیں کہ اسے نظر انداز کر دیا جائے۔ یہی وجہ ہے کہ ہندوستان کے موقف کو درست ثابت کرنے والے اس بیان سے پاکستان کے سیاسی، سفارتی و فوجی خیموں اور خاص طور پر لشکر طیبہ، جماعت الدعویٰ اور حقانی نیٹ ورک میں ایسی بوکھلاہٹ پیدا ہو گئی ہے کہ پاکستانی فوج نے آناً فاناً حرکت میں آتے ہوئے وزیر اعظم کو پیغام بھیجا کہ وہ قومی سلامتی کمیٹی کا ایک اعلیٰ سطحی ہنگامی اجلاس طلب کریں۔

معلوم ہوا ہے کہ اس معاملہ پر اجلاس طلب کر لیا گیا جس میں پاکستان کے وزیراعظم سے لے کرکئی اعلیٰ اور با اختیار شخصیات و ودفاقی وزراءشرکت کر رہے ہیں۔ واضح ہو کہ نواز شریف نے ڈان اخبار کو اپنے انٹرویو میں 26/11ممبئی حملوں پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا تھا کہ ”پاکستان میں دہشت گرد نیٹ ورک سرگرم ہے۔ کیا ہمیں ان دہشت گروں کو سرحد پار حملے کرنے اور ممبئی میں 150افراد کو قتل کرنے کی اجازت دے دینی چاہیے؟ نواز شریف نے راولپنڈی کی انسداد دہشت گردی عدالت میں ممبئی حملوں کے مقدمہ میں تاخیر کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ ہم نے سماعت پوری کیوں نہیں کی؟“

(اردو تہذیب )

Read all Latest pakistan news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from pakistan and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Nawaz sharif statement proves indian stand over 26 11 mumbai attacks in Urdu | In Category: پاکستان Pakistan Urdu News
What do you think? Write Your Comment